next

نماز کے بارے میں گفتگو

back

 

نماز کے مسائل

ہاں۔ ہم اپنی گفتگو کا آغاز نماز سے کریں گے،میرے والد نے فرمایا:  نماز (جیسا کہ حدیث شریف میں وارد ہوا ہے : عمود دین ہے۔)

ان قبلت قبل ما سواھا، و ان ردت رد ماسواھا۔

اگر نماز قبول ہوگئی تو ہر چیزقبول ہوجائیگی اوراگر وہ ردکردی گئی تو تمام چیزیں رد کردی جائیں گیمیرے والد نے مزیدفرمایا کہ نماز خالق ومخلوق کے درمیان ایک معین وثابت ملاقاتوں کی جگہ ہے اللہ تعالی نے اس کے اوقات اس کے طریقہاس کی صورتوں،اس کی کیفیات کواپنے بندوں کیلئے مقرر کیاہے تم نمازکے دوران اس کے سامنے اپنی عقل وقلب اور اعضاء وجوارح کواس کی طرف متوجہ کرتے ہوئے کھڑے ہوجاؤ اس سے بات اور مناجات کرو پس تم پر لازم ہے کہ مناجات کے دوران صفائے قلب وذہن کے ساتھ اشک ریزی کرو(آنسوبہاؤ) اور شفاف روح کے ساتھ اس کی تسبیح کرو۔

اس طرح کہ جیسے اس کے سامنے کھڑے ہو اور اسی کے ساتھ اس کی ملاقات اور اس کے وصال کی لذت وسعادت کی نعمت سے لطف اندوزہوتے ہو اور یہ فطری بات ہے کہ اس کی محبت تم پر خوف کے ساتھ طاری ہوگی کیونکہ تم اپنے ایسے خالق کے سامنے کھڑے ہوگے کہ جوعظیم اور تم پر رحیم ہے اور تمہارے حال پر مہربان ہے اور سمیع وبصیر ہے۔

آپ کے مولا حضرت امیرالمومنین علیہ السلام اپنے رب کی عبادت میں پوری طرح مستغرق رہتے اور ہر وقت اس کی طرف اس طرح متوجہ رہتے کہ جنگ صفین میں آپ کے جسم سے تیر نکالا گیا تو اس کا دردو الم آپ کو اپنے رب کی مناجات سے نہ روک سکا۔

امام حضرت زین العابدین علیہ السلام جب وضو کرتے تو آپ کا رنگ زرد پڑجاتا آپ کے گھروالوں میں سے کسی نے پوچھاآپ کا وضو کے وقت یہ کیا حال ہوجاتا ہے؟تو آپ نے جواب میں فرمایا:  کیا تم نہیں جانتے کہ میں کس کے سامنے کھڑے ہونے جارہا ہوں اور جب آپ نماز کے لئے کھڑے ہوتے تو آپ کے جسم میں لرزہ پڑجاتا کسی نے اس بارے میں پوچھا تو آپ نے فرمایا :

میں اپنے رب کے سامنے کھڑا ہونا چاہتاہوں اور اس سے مناجات کرنا چاہتاہوں تو میرے جسم میں لرزہ پڑجاتاہے ۔

اور جب تمہارے امام حضرت موسیٰ کاظم علیہ السلام گوشہ تنہائی میں نماز کے لئے کھڑے ہوتے تھے تو روتے اور آپ کے جسم کے اعضاء میں اضطراب پیدا ہوجاتا اور آپ کے قلب(مبارک) میں خوف خدا سے حزن واندوہ پیدا ہو جاتاتھا۔

اور جب آپ کو ہارون رشید کے تاریک اور وحشتناک قید خانہ میں لے جایا گیا تو وہاں آپ خدا کی اطاعت وعبادت میں مشغول ہوگئے اور اس بہترین وپسندیدہ فرصت کے مہیا ہونے پر اپنے پروردگار کا شکر بجالائے اور اپنے پروردگارکومخاطب کرتے ہوئے فرماتے ہیںمیں نے تجھ سے عرض کیا تھا کہ مجھے اپنی عبادت کا موقعہ عنایت فرماتو نے میری اس دعا کو قبول کیا لہٰذا میں تیری اس چیزپر حمدوثنا بجالاتاہوں۔

اور میرے والد نے بات جاری رکھتے ہوئے فرمایا نماز نفس کی اندرونی خواہش وکیفیت کی ظاہری حالت اور ایسے خدا سے لگاؤ اور ربط کانام ہے جوکائنات کا خالقغالب مالک اور سب کا نگہبان ہے۔جس وقت تم اپنی نماز کو شروع کرتے ہوئے (اللہ اکبر ) کہتے ہو تو مادیات اور اس کی راہ وروش اور اسی کی زیب وزینت تمام کی تمام تمہارے نفس میں سے دور ہوجاتی ہے اور تم اکثر مضمحل ہوجاتے ہو کیونکہ تم اس کے سامنے کھڑے ہوتے ہو کہ جو خالق کائنات اور اس پر غالب ہے جس نے اس دنیا کو اپنی مشئیت کے مطابق مسخر کیا ہے پس وہ ہر چیز سے بڑا عظیم ہے اور ہر چیز اس کے قبضہ میں ہے اور جس وقت تم سورة الحمد کی قرائت کرتے ہو ایاک نعبدوایاک نستعین تو تم اپنے نفس اور جسم کو اللہ قادرو حکیم کی استعانت کے علاوہ کسی دوسری استعانت کے اثر سے پاک وصاف کرلیتے ہو۔(یعنی صرف اللہ سے استعانت چاہتے ہو کسی اور سے نہیں )اور یہ خشوع کی پسندیدہ عادت ہر روز پانچ مرتبہ حتمی ہوجاتی ہے صبح ظہر،عصر،مغرب،اور عشاء،اور اگر تم چاہو اس میں مستحب نمازوں کا اضافہ کر سکتے ہو۔

سوال:         اس کے معنی یہ ہوئے کہ نمازیں واجب اور مستحب دونوں ہیں؟

جواب:        ہاں کچھ نمازیں واجب اورکچھ دوسری نمازیں مستحب ہیں؟

سوال:           واجب نمازیں کو تو میں جان گیا کہ جوہرروزادا کی جاتی ہیں وہ صبحظہرعصر،مغرب اور عشاء،ہیں؟

جواب:         نہیں فقط یہی نمازیںواجب نہیں ہیں بلکہ کچھ دوسری نمازیں بھی واجب ہیں اور وہ یہ ہیں۔

۱        نماز آیات (دوسری نمازکی بحث میں دیکھیے)

۲       نماز طواف حج اور عمرہ کے وقت (حج کی بحث میں دیکھیئے)

۳      نماز میت (میت کے بیان میں دیکھیے)

۴     باپ کی وہ قضا نمازیں جو اس نے پڑھی نہیں ہیں (اس حیثیت سے کہ اس کے بڑے بیٹے پر اس کی موت کے بعد اس کی نمازکی قضا واجب ہے۔)

۵    وہ نماز جو اجارہ یا نذریا قسم یا ان دونوں کے علاوہ واجب ہو جاتی ہے اور وہ نماز مختلف حالات کی بناپر بدلتی رہتی ہے۔

اس کے علاوہ مقدمات نماز پانچ ہیں اور وہ یہ ہیں

۱      وقت نماز

۲      قبلہ

۳    نماز کی جگہ

۴     نمازی کا لباس

۵     نماز کی حالت میں طہارت

میرے والد نے فرمایا کہ تم یہ خیال نہ کرنا کہ یہ مقدمات نماز یومیہ کے علاوہ دوسری نمازوں میں واجب نہیں ہیں چاہے وہ واجب ہوں یا مستحب، شرط اول (وقت) کے علاوہ تمام شرائط دوسری نمازوں میں واجب ہیں جن کی تفصیل انشاء اللہ بیان کی جاءے گے اور اب تفصیل کے ساتھ اس مقدمات میں سے ہر ایک کے بارے میں الگ الگ بیان کرتاہوں

سوال:         وقت نماز سے شروع کیجئے؟

جواب:         ہاں ان مقدمات میں وقت سب سے زیادہ بہتر ہے ۔

۱۔   نمازکا وقت  

نماز یومیہ کا وقت معین ہوتا ہے اس میں کسی قسم کی کوتاہی جائز نہیں ہے پس نماز صبح کا وقت صبح (صادق)  سے سورج کے نکلنے تک ہے اور نماز ظہرین (ظہروعصر)کا وقت زوال شمس سے غروب تک ہے اور اول وقت ظہر سے مخصوص ہے اور آخروقت عصرسے مخصوص ہے ان دونوں کی ادا کے مقدار کے مطابق ۔

سوال:     میں زوال کو کس طرح پہچانوں کہ یہی وہ وقت ہے کہ جس میں نماز ظہرین پڑھی جاتی ہے؟

جواب:    زوال کا وقت طلوع شمس اور غروب شمس کا درمیانی وقت ہے لیکن نماز مغربین (مغرب وعشاء کا وقت اول مغرب سے آدھی رات تک ہے پہلا مخصوص وقت نماز مغرب سے ہے اور آخر وقت نماز عشاء سےمخصوص ہے ان دونوں کے ادا کرنے کے مطابق تم نماز مغرب کومشرق کی سرخی زائل ہوجانے کے بعد پڑھ سکتے ہو۔

سوال:            یہ حمرہ مشرقیہ کیا ہے(مشرق کی سرخی)؟

جواب:        وہ آسمان میں مشرق کی طرف ایک سرخی ہے  جوکہ سورج کے غروب ہونے کی جگہ کے مقابل ہوتی ہے جب سورج بالکل غروب ہو جاتاہے تو وہ زائل ہوجاتی ہے ۔

سوال:        میں کیسے آدھی رات کو معین کروں کہ یہ وقت نماز عشاء کا آخری وقت ہے؟

جواب:    سورج کے ڈوبنے اور صبح (صادق) کے نکلنے کا درمیانی وقت نصف لیل یعنی آدھی رات ہے ۔

سوال:     اگر رات آدھی یا زیادہ گزرگئی اور میں نے نماز مغربین جان کر نہیں پڑھی تو کیا حکم ہے۔

جواب:    تم پر واجب ہے کہ جلدی سے صبح کے نکلنے سے پہلے دونوں نمازوں کو بقصد قربت مطلقہ پڑھو یعنی نماز کی ادا اور قضاء کاذکر نہ کرو۔

سوال:          نماز میں جو چیز اہم ہے اس کا لحاظ رکھنا چاہیے اور وہ یہ کہ ہر نماز کو شروع کرنے سے پہلے اس کے وقت کے داخل ہوجانے کا یقین ہو جانا چاہیے وہ نماز صبح  ہویا ظہر  یا عصر  یا مغرب  یا عشاء کی ہو۔

(۲)  قبلہ

نماز کی حالت میں تم پر قبلہ رخ ہونا واجب ہے اور قبلہ وہ جگہ ہے جیسا کہ تم جانتے ہو۔ جہاں مکہ میں کعبہ محترم واقع ہے ،

سوال:        اور جب بہت جدوجہد اور ان تمام حجتوں کے بعد بھی جن پر بھروسہ رکھ کرقبلہ کی سمت تعین کیا جاسکتا ہے قبلہ کی سمت کو معلوم کرنے پر قادر نہ ہوسکوں تو؟

جواب:           جس سمت قبلہ کا تم کو ظن ہو اس سمت نماز پڑھتو۔

سوال:        اور اگر ایک سمت کو دوسری سمت پر ترجیح نہ دے سکوں تو؟

جواب:        جس سمت قبلہ کا تم کو ظن ہو اس سمت نماز پڑھ لو۔

سوال:         اور جب میں کسی ایک سمت کے متعلق عقیدہ پیدا کرلوں کہ یہ قبلہ کی سمت ہے اور نماز پڑھ لوں پھر نماز کے بعد معلوں ہوجائے کہ میں نے خطا کی ہے؟

جواب:         جب تمہارا  انحراف قبلہ سے صرف دائیں یا بائیں جانب کے درمیان ہوتو تمہاری نمازصحیح ہے ،اور اگر تمہارا قبلہ سے انحراف اس قدر زیادہ ہو یا تمہاری نماز قبلہ کی سمت سے برعکس ہو اور ابھی نماز کا وقت بھی نہیں گزرا تو نماز کا اعادہ کرو اور اگر نماز کا وقت گزر گیا ہو تو نماز کی قضا واجب نہیں ہے

(۳) نمازی کا مکان

اس بات کا لحاظ کرتے ہوئے کہ تمہاری نماز کی جگہ مباح ہو کیونکہ نماز غصبی جگہ پر صحیح نہیں ہے اور غصی جگہ میں وہ چیز شمار ہوگی کہ جس کا خمس واجب ہو اور نہ دیا گیا ہو ،چاہے گھر ہو یا ان دونوں کے علاوہ کوئی اور چیز اور تفصیل کے ساتھ تم کو اس کی شرح (خمس کی بحث میں دی جائیگی) یہاں صرف ضرورت کے تحت اشارہ کردیا ورنہ غفلت، چشم پوشی،لاپرواہی جہنم میں جانے سے نہیں روک سکتی، بہت سے ایسے ہیں کہ جنھوں نے اپنے اموال میں سے حق خدا کو نہ نکالا اور وہ جہنم میں چلے گئے

سوال:        فرض کیجئے  زمین غصبی نہیں ہے لیکن اس پر جو فرش بچھا ہے وہ غصبی ہے تو کیا یہی حکم رہے گا؟

جواب:           یہی حکم ہے ،کہ تمھاری نماز اس فرش پر صحیح نہیں ہے میرے والد نے مزید فرمایا کہ تمھارے سجدے کی جگہ پاک ہونی چاہئے ۔

سوال:         آپ کامقصد سجدہ کی جگہ سے پیشانی کی جگہ ہے؟

  جواب:        ہاں صرف سجدے کی جگہ کی طہارت یعنی سجدہ گاہ یا جس پر تم سجدہ کررہے ہو (وہ پاک ہو)۔

سوال:          اور نماز کی باقی جگہ مثلاً دونوں پاؤں کی جگہ یاوہ جگہ کہ جس کو نماز میں پورا جسم گھیرے ہوئے ہے؟

جواب:         اس میں طہارت شرط نہیں ہے پس اگر سجدے کی جگہ کے علاوہ دوسری جگہ نجس ہو اور اس جگہ کی تری جسم اور لباس تک سرایت نہ کرے تو اس جگہ پر  نماز پڑھنا جائز ہے یہاں پھر چندموضوعات باقی رہ گئے ہیں جو نمازپڑھنے والے  کی جگہ سے مخصوص ہیں میں ان کو تمہارے لئے چند صورتوں میں بیان کرتاہوں۔

(۱)      نماز میں اور نماز کے علاوہ کسی صورت میں معصومین کی قبورکی طرف پشت کرنا جب کہ پشت کرنے سے بے ادبی ہوتی ہو جائز نہیں ہے۔

(ب)     مرد اور عورت کی نماز صحیح نہیں ہے جب وہ دونوں ایک دوسرے کے برابر کھڑے ہوں یا عورت مرد سے آگے کھڑی ہو مگریہ کہ دونوں کے کھڑے ہونے کے درمیان دس ہاتھ سے زیادہ فاصلہ ہویا، ان دونوں کے درمیان کوئی چیز حائل ہو مثلاً دیوار۔

جواب:          نماز کا پڑھنا مسجدوں میں مستحب ہے مساجد میں سب سے زیادہ افضل نماز کا پڑھنا مسجد الحراممسجد نبوی مسجد کوفہ اور مسجد اقصی میں ہے اسی طرح آئمہ معصومین علیہم السلام کے مقدس روضوں میں نماز کا پڑھنا مستحب ہے ۔

(د)     عورت کے لئے افضل ہے کہ وہ اپنی نماز پڑھنے کے لئے زیادہ تر ایسی جگہ کا انتخاب کرے کہ جہاں بالکل تنہائی ہواور کوئی نامحرم اس کو نہ دیکھے حتی کہ اپنے گھرمیں بھی ایسی ہی جگہ کا انتخاب کرے۔

۴۔نمازپڑھنے والے کالباس اور اس میں چندشرطیں ہیں

لباس پاک ہو اور غصبی نہ ہو لباس کے مباح ہونے کی شرط یہ ہے کہ صرف شرمگاہ کو چھپانے والا لباس مباح ہو اور یہ چیزمردو عورت کے درمیان مختلف ہے مردکے لئے کچھ اندرونی لباس کا مباح ہوناکافی ہے مثلاٌ جانگیہ (کم از کم اتنا لباس مرد کا مباح ہوجب کہ عورت کے لئے اتنا کافی نہیں ہے کیونکہ نماز میں عورت کے لباس کا دائرہ وسیع ہے اور وہ تمام بدن کا چھپانا ہے،سوائے ان اعضاء کے کہ جو چھپانے سے مستثنی رکھے گئے ہیں (یعنی چہرہ ہاتھ گٹوں تک اور پاؤں کا ظاہری حصہ)۔

ب     لباس مردار کے ان اجزاء کا نہ ہو کہ جن میں جان ہوتی ہے جیسے اس حیوان کی کھال کہ جو شرعی طریقہ سے ذبح نہ کیا گیا ہو (اگرچہ وہ لباس اس کی شرمگاہ کو بھی نہ چھپاتا ہو،یعنی نمازی کے ہمراہ ان اجزاء میں سے کوئی چیز نہ ہو)

سوال:        کیا اس کھال کی بلٹ میں نماز پڑھنا صحیح ہے کہ جو کسی مسلمان کے ہاتھ سے خریدی ہوئی ہو یا اسلامی ممالک میں بنائی گئی ہو جب کہ اس کا تذکیہ معلوم نہ ہو؟

جواب:           ہاں اس میں نماز پڑھنا صحیح ہے۔

سوال:        اور کھال کی وہ بلٹ جو کافر سے لی گئی ہو یا کافروں کے ممالک میں بنائی گئی ہو؟

جواب:        ہاں اسمیں بھی نماز پڑھنا صحیح ہے( مگریہ کہ تمہیں معلوم ہوجائے کہ یہ غیر مذ کی حیوان کی کھال سے بنی ہے تو پھر نماز صحیح نہیں ہے) 

سوال:         جب کہ اس کھال کی بلٹ کے بارے میں یقین نہ ہو مثلا معلوم نہ ہوکہ اصلی کھال کی ہے یا نقلی؟ توکیا حکم ہے؟

جواب:    مذکورہ     تمام حالات میں اس میں نماز پڑھنا صحیح ہے ۔

الف    نمازی کا لباس درندوں کے اجزاء کا بنا ہوا نہ اور اس مقدار میں نہ ہوکہ جس میں شرمگاہ چھپائی جاسکتی ہو اور نہ درندوں کے علاوہ ان جانوروں کا ہو کہ جن کا گو شت نہ کھایا جاتا ہو

ب        مردوں کا لباس خالص ریشم کا نہ ہو،لیکن عورتوں کے لئے خالص ریشم کے لباس میں نماز پڑھنا جائز ہے ۔

ج    مردوں کےلئے خالص سونے کے تاروں کا بنا ہوا لباس نہ ہو یا سونے کے تار اس میں اتنے مخلوط نہ ہوں کہ جس پر سونے کانام صادق آئے ہاں اگر بہت کم سونے کے تارہوں تو کوئی حرج نہیں۔

سوال:        اور اگر (سونے کی انگوٹھی یا سونے کا چھلہ یا کڑا ہاتھ میں ہو تو اس کا کیا حکم ہے؟

جواب:        اگر سونے کی انگوٹھی یا سونے کا چھلہ یا کڑا ہاتھ میں ہوتو مردکا اس کے ساتھ نماز پڑھنا صحیح نہیں ہے اسی طرح مردکے لئے ہمیشہ سونے کا لبا س پہنا حرام ہے۔

سوال :                   کیا نماز کے علاوہ بھی مرد کو سونا پہننا حرام ہے ؟

جواب :                   جی ہاں۔

سوال:         سونے کے وہ دانت جو بعض مرد بنواتے ہیں اور سونے کی وہ گھڑی جو بعض لوگ جیب میں رکھتے ہیں اس کا کیا حکم ہے؟

جواب:        یہ چیزیں جائز ہیں اور ان کے ساتھ ان لوگوں کا نماز پڑھنا جائز ہے

سوال:          کسی مرد کو معلوم نہیں کہ اس کی انگوٹھی سونے کی ہے اور وہ اس میں نماز پڑھ لے معلوم ہو لیکن بھول کر نماز پڑھ لے،اور پھر نماز کے بعد اس کو معلوم ہوجا ئے، یا اس کو بتایا جائے،تواس کا کیا حکم ہے؟

جواب:         اس کی نماز صحیح ہے۔

سوال:           اور عورتوں کیلئے کیا حکم ہے؟

جواب:         ان کے لئے ہمیشہ سونے کا لباس پہننا اور اس میں نماز پڑھنا صحیح ہے۔

 اب نمازی کے لباس میں جواہم چیزہے وہ یہ کہ نماز میں مرد پر شرمگاہ کا کتنا چھپانا واجب ہے تو اس کی مقدار صرف عضوتناسل ،دونوں بیضہ، اور پاخانے کا مقام چھپانا واجب ہے،عورت پر نماز کی حالت میں پورے جسم کا چھپانا واجب ہے یہاں تک کہ بالوں کا بھی چھپانا واجب ہے اگر چہ وہ تنہاہی کیوں نہ ہو،اور اس کو کوئی دیکھ بھی نہ رہا ہو،سوائے اس چہرہ کے کہ جس کو عموماً اوڑھنی نہیں چھپاتی کہ اس کا پلو کاندھے پر ڈالا جائے،اور دونوں ہاتھ کلائیوں تک اور دونوں پیر انگلیوں کے سرے سے گٹوں تک ۔

یہ تمام کے تمام مقدمات نماز تھے میرے والد نے فرمایا نماز خود چند واجب اجزاء کا ایک مرکب عمل ہے اور وہ اجزاء یہ ہیں نیت،تکبیرة الاحرامقیام،قرائت،ذکر،رکوع،سجدے،تشھد،اور،سلام ،ان اجزاء میں ترتیب اور موالات کا لحاظ رکھا جائیگا جیسا کہ آپ کو آئندہ معلوم ہوگا۔

سوال:           آپ نے نماز کے بیان کو اذان واقامت سے شروع کیوں نہ کیا ؟ 

جواب:        اس سے پہلے کہ آپ کو میں اس سوال کا جواب دوں ضروری ہے کہ آپ کو ان اجزاء کے بارے میں بتاؤں کہ ان میں سے کچھ کا نام ارکان ہے اور وہ نیت، تکبیرة الاحرامقیام،رکوع اور سجدے ہیں ۔

میں نے تمام اجزاء میں صرف ان کو خصوصیا ت کے ساتھ اس لئے بیان کیا کہ یہ نماز کے باطل ہونے میں ایک خاصیت رکھتے ہیں اور وہ یہ کہ اگر ان میں سے کوئی عمداً یاسہواًً کم یا زیادہ ہوجائے تو نماز باطل ہوجاتی ہے لہٰذا  یہ اپنے اس نام میں امتیاز رکھتے ہیں۔

اب آپ کے سوال کا جواب دیتاہوں ۔

اذان واقامت نماز پنجگانہ میں مستحب موکدہ ہیں (سنت موکدہ) بہتر ہے کہ نمازی ان کو بجالائے لیکن اگر ترک بھی  کردے تو نماز صحیح ہے۔

اس کے بعد میرے والد نے فوراً نصیحت کرتے ہوئے فرمایا:

میں آپ سے تمنا کرتاہوں کہ آپ اپنی پنجگانہ نماز میں اذان واقامت کو ترک نہ کریں ورنہ ان دونوں کا ثواب کم ہوجائے گا۔

سوال:         جب میں چاہوں کہ اذان دوں تو کس طرح اذان دوں؟

جواب:           تو فرمایا : تم کہو۔

 

اَللّٰہُ اکبَرُ                                      چار مرتبہ

اشھَدُ اَنْ لاَّ اِلٰہَ اِلاَّ اللّٰہُ            دومرتبہ

اٴَشْھَدُ اٴَنَّ مُحَمَّداً رَّسُوْلُ اللّٰہُ    دو مرتبہ

اَشہدان علیا ولی اللہ ۔۔۔              دو مرتبہ

حَیَّ عَلَی الصَّلاَةِ                           دو مرتبہ                               

حَیَّ عَلَی الْفلَاَحِ                           دو مرتبہ

حَیَّ عَلیٰ خَیْرِ الْعَمَلِ                     دو مرتبہ

اٴَللّٰہُ اٴَکْبَرُ                                    دومرتبہ

لَاَ اٴِلٰہَ اٴِلاَّ اللّٰہ                               دو مرتبہ

سوال:         اقامت کس طرح  کہیں؟

جواب:           قامت  میں  کہیں:

اٴَللّٰہُ اٴَکْبَرُ                                    دو مرتبہ

اٴَشْھَدُ اٴَنْ لاَّ إِلٰہَ إِلاَّ اللّٰہُ                 دومرتبہ

اٴَشْھَدُ اٴَنَّ مُحَمَّداً رَّسُوْلُ اللّٰہُ            دو مرتبہ

اشہدان علیا ولی اللہ ۔۔۔              دو مرتبہ

حَیَّ عَلَی الصَّلاَةِ                           دو مرتبہ                               

حَیَّ عَلَی الْفلَاَحِ                           دو مرتبہ

حَیَّ عَلیٰ خَیْرِ الْعَمَلِ                     دو مرتبہ

اٴَللّٰہُ اٴَکْبَرُ                                    دومرتبہ

لَاَ اٴِلٰہَ اٴِلاَّ اللّٰہ                               ایک مرتبہ

 

سوال:        اور امیرالمومنین علی بن ابی طالب علیہ السلام کی ولایت کی شہادت؟

جواب:           آپؑ کی ولایت کی شہادت رسالت کی شہادت کی تکمیل ہے اور مستحب ہے۔ لیکن اذان واقامت کا جزء نہیں ہے۔

نیت

سوال:        اس بناپر کیا اجزاء نماز میں پہلا جزء وہی ہے جوآپ نے بتایا یعنی نیت ؟

جواب:    ہاں۔

سو ال :     نماز کی نیت کیسے کی جائے گی؟

جواب:        نماز میں تمہارا قصد فرمان الٰہی کو بجالانے کے لئے ہو یعنی نماز کی نسبت اللہ تعالی کی طرف ہو اور یہ نسبت تذلیلی ہو،چاہتا ہوں تم کو اضافہ تذلیلیہ کے بارے میں واضح طور پرسمجھا ؤں۔

اضافہ تذلیلیہ ( نسبت تذلیلی) ایک ایسا عمل ہے جو افعال عبادی سے قریب ہےاس کے ذریعہ انسان میں ایک شعوری کیفیت پیدا ہوتی ہے۔ کہ وہ مولائےجلیل سجانہ وتعالی کے سامنے ایک عید ذلیل ہے۔

سوال:        کیا نیت کے لئے کوئی لفظ مخصوص ہے؟

جواب:         ہرگز نہیں نیت ایک عمل قلبی ہے زبانی عمل نہیں،لہٰذا  اس کے لئے کوئی لفظ معین نہیں،اس کا محل قلب ہے اگر تمہارا مقصد نماز میں تقرب الی اللہ نہیں ہے، کہ جس کی تائید تمہارے حرکات کریں گے۔ تو تمہاری نماز باطل ہے۔

 دوسرے۔ تکبیرة الاحرام

س    یہ تکبیرة الاحرام کیا ہے؟

جواب:          تمہارااللہ اکبر کہنا اس حالت میں کہ تم اپنے قدموں پر کھڑے اور اپنی جگہ ساکت ہوکر قبلہ کی طرف رخ کرکے عربی زبان میں اس کو ادا کروکلمہ( اکبر) کی ہمزہ کی آواز کو واضح طور پر اور اسی طرح تمام حروف اپنی زبان پر جاری کرو،اور افضل یہ ہے کہ تکبیرة الاحرام اور سورالحمد کے درمیان تم تھوڑا ساخاموش رہ کر فاصلہ پیدا کرو تاکہ تکبیر کی آخری (راء) سورالحمد سے مل نہ جائے۔

سوال:      آپ نے مجھ سے فرمایا: حالت قیام میں تم پر تکبیرۃ الاحرام کہنا واجب ہے،اگر میں مریض ہوجاؤں اور اپنے قدموں پر کھڑانہ ہو سکوں،اگرچہ عصا یا دیوار کایا ان دونوں کے علاوہ کسی اورچیز کا سہارا بھی نہ لے سکوں تو میں پھر نمازکس طرح پڑھوں؟

 جواب        تم بیٹھ کر نماز پڑھو،اگر یہ بھی ممکن نہیں تو پھرلیٹ کر،بائیں کروٹ یا داہنی کروٹ چہرہ کو قبلہ رخ کرکے نماز پڑھوں اور واجب ہے کہ امکان کی صورت میں داہنی کروٹ کو بائیں کروٹ پر مقدم کرو)

سوال:           اگر میں یہ بھی نہ کرسکوں تو؟

جواب:           تو تم چت لیٹ کر اس طرح کہ تمہارے پاؤں قبلہ کی طرف ہوں نماز پڑھو۔

سوال:         جب کہ میں تکبیرة الاحرام کو قیام کی حالت میں کہہ سکتا ہوں مگر اس قیام کو جاری نہیں رکھ سکتا تو کیا کروں؟

جواب:       قیام کی حالت میں تکبیر کہو اور باقی نماز کو بیٹھ کریا لیٹ کر جیسا بھی آپ کے لئے مناسب ہوپڑھو۔

تیسرے۔ قرائت

تکبیرۃ الاحرام کے بعد سورۂ حمد کی قرائت کرو( اور اس کے بعد کسی دوسرے سورة کی کامل قرائت کرو)صحیح قرائت ،اس میں کسی قسم کی بھول چوک نہیں ہونی چاہیے اور سورة توبہ کے علاوہ ہر سورة کے شروع میں بسم اللہ پڑھنی چاہیے جیساکہ قرآن مجید میں حکم ہے۔

سوال:            اگر سورہ حمد کے بعد دوسرا سورہ پڑھنے کے لئے وقت میں گنجائش نہ ہوتو؟

جواب:      دوسرے سورہ کو نہ پڑھو، اور صرف سورہ الحمد کی قرائت کرو، اسی طرح اگر تم مریض ہو اور دوسرے سورہ کو پڑھنے کی قوت نہیں رکھتے یا کسی چیز کا خوف ہویا جلدی ہو تو دوسرے سورہ کو ترک کرسکتے ہو۔

جواب:        دونوں سوروّں کو کس طرح پڑھوں ؟

سوال:        مرد پر نماز صبح اور مغرب وعشاء میں دو کا با آواز بلند پڑھنا واجب ہے اور نماز ظہرو عصر میں دونوں کا آہستہ پڑھنا واجب ہے۔

سوال:        اور عورتوں کے لئے؟

جواب:        عورت بلند آواز سے نہیں پڑھ سکتی،نماز ظہرین میں اس پر واجب ہے کہ آہستہ پڑھے۔

سوال:         جب کہ میں نماز میں حکم جہر واخفات (بلند آواز اور آہستہ ) سے جاہل ہوں یا بھول کردونوں سورتوں کو یا ان میں سے کچھ کو بلند آوازمیں پڑھ لیا جبکہ میری نماز ظہرو عصر ہے یعنی میں نے حکم کے خلاف کیا تو کیا حکم ہے؟

جواب:         تمہاری نماز صحیح ہے ۔

سوال:         یہ پہلی اور دوسری رکعت کے بارے میں تھا، تیسری اور چوتھی رکعت میں کیا پڑھوں؟

جواب:         تم کو تیسری اور چوتھی رکعت میں سورۂ حمد اور تسبیحات اربعہ پڑھنے کے درمیان اختیار ہے،چاہے جو پڑھو،دونوں حالتوں میں آواز آہستہ ہو یعنی سورہ الحمد یا تسبیحات اربعہ کو آہستہ پڑھو سوائے بسم اللہ کے،کہ تم کو بلند آوازسے پڑھنے کا حق ہے۔ چاہے تم امام جماعت ہویا فردا پڑھ رہے ہو۔

سوال:         اگر میں نے تسبیحات اربعہ کو اختیار کیا تو میں کیا پڑھوں؟

جواب:        آہستہ آواز میں ایک مرتبہ سُبۡحَانَ اللہِ وَالۡحَمۡدُللہِ وَلاَاِلٰہَ اِلاَّاللہُ وَاللہُ اَکۡبَرُ کہنا تمہارے لئے کافی ہے اور تین مرتبہ پڑھنا افضل ہے۔

سوال:        کیا یہاں قرائت میں کوئی اور چیز بھی رہ گئی ہے؟

جواب:        ہاں قرائت کرتے وقت زیادہ فصیح یہ ہے کہ تم کلمات کو حرکت دو یا آخر کلمات میں جو حرکت ہے اس کو اسی کے اعتبار سے اداکرو پس اگر کلمات کے آخری حروف ساکن ہیں تو حرکت مت لگاؤ اور جب تم کو کسی کلمہ پر وقف کرنا ہو تو زیادہ فصیح یہ ہے کہ اس کے آخری حروف کو ساکن کردو۔

پھر تم پر واجب ہے کہ حرف الف کو ذرا سا کھینچ کر پڑھو اور جب کلمہ ((ولاالضالین)) کو سورہ الحمد کے آخر میں پڑھو تو اس کے الف اور تشدید کو بصورت صحیح ادا کرو۔

سوال اور اسکے بعد؟

جواب:           ہمزہ وصل کو اپنی قرائت میں اس وقت حذب کروجب درمیان کلام میں آئے اور کلام کے شروع میں (اس کو پڑھو) حذف مت کرو اور ہمزہ قطع کو اپنی زبان پر اس طرح جاری کرو کہ اچھی طرح آشکار اور واضح ہوجائے۔

سوال:        ہمزہ وصل اور ہمزہ قطع کو مثال سے بیان کیجئے؟

جواب:           مثلاًہمزہ اللہ الرحمن۔الرحیم اھدنا میں ہمزہ وصل ہے۔ پڑھنے کے دوران اس کو زبان پر ظاہر مت کرو اور مثلاً انعمت ایاک میں ہمزہ قطع ہے اس کو پڑھنے کے دوران زبان پرواضح طور پر جاری کرو

سوال:         پھرکیا؟

جواب:        اگر تم چاہو تو سورہ حمد کے بعد سورہ  توحید پڑھویا دوسرے سورہ میں سے جو بھی  تمہارے لئے آسان ہو اس کو اختیار کرو کلمہ احد کو وقف کرکے اس کو ساکن کرو جب تم آیہ کریمہ(( قل ھواللہ احد)) کو پڑھو یعنی ذرا سا احد پر ٹھہر کر اس کے بعد والی آیہ ((اللہ الصمد)) میرے والد نے یہ کہہ کر مزید فرمایا:

نماز میں تمہاری قرائت زیادہ صحیح اور صاف ہونی چاہئے اس کے لئے تم کسی ایسے شخص کے سامنے نماز پڑھو جس کی نماز صحیح اور بہتر ہو،تاکہ وہ تمہاری قرائت اور نمازکو درست اور صحیح کردے،اگر تم پر یہ چیز مشکل ہوتو کم از کم دونوں(سورتوں سورہ الحمد اور اس کے بعد والے سورہ کی قرائت) میں دقت نظر سے کام لیتے ہوئے مشہور قاریوں میں سے کسی ایک کی روشنی میں قرائت کروتاکہ تمہاری غلطی معلوم ہوجائے اگر غلطی معلوم ہوجائے تو اس کو صحیح کرلو  یہ تمہارے لئے بہتر ہے اس چیز سے کہ تم اپنے بچپنے کی جو غلط قرائت ہے اس کو جاری رکھو اور جس وقت تم پر تمہاری غلطی منکشف ہو جا ئےتو اتنا عرصہ گزرجائے کہ چند سال جو نماز تم نے پڑھی ہے وہ ایسی نماز ہوکہ جس کی قرائت صحیح نہ ہو۔

چوتھے قیام

اس کے معنی واضع ہیں لیکن میں چاہتا ہوں کہ ذرا سا اشارہ اس کی طرف بھی کروں کہ قیا م نماز کے اجزاء میں سے ایک ایسا منفرد جز ہے کہ جس میں دو صفتیں موجود ہیں اور وہ یہ کہ وہ کبھی رکن نماز ہے جیسے تکبیرة الاحرام کی حالت میں قیام اور رکوع سے پہلے قیام کہ جس کو قیام متصل بہ رکوع سے تعبیر کیا جاتاہے ۔پس ان دونوں قیام پر رکن کے احکام اور خصوصیات مترتب ہوتے ہیں اور کبھی وہ واجبات نماز سے ہے لیکن رکن نہیں ہے جیسے قرائت اور تسبیحات اربعہ کی حالت میں قیام اور رکوع کے بعد والا قیام پس اس صورت میں اس پر واجبات نماز کے احکام جاری ہوتے ہیں جو غیر رکن ہیں ۔

پانچویں رکوع

 پھردونوں سوروں کی قرائت کے بعد رکوع واجب ہے۔

سوال:        میں کس طرح رکوع کروں؟

جواب:        اتنا جھکو کہ تمہارے ہاتھوں کی ہتھیلیاں تمہارے گھٹنوں تک پہونچ جائیں اور جس وقت تم پورے طریقہ سے رکوع میں خم ہوجاؤ تو (سبحان ربی العظیم وبحمد) ایک مرتبہ کہو یا تین بار (سبحان اللہ) کہو یا تین مرتبہ (اللہ اکبر) یا تین مرتبہ ( الحمد للہ) کہو یا ان کے علاوہ جو بھی ذکر ممکن ہو مثلاً تین مرتبہ تہلیل (لا الہ الا اللہ) کو پھر رکوع سے سیدھے کھڑے ہوکر سجدوں کے لئے خم ہو ۔

چھٹے سجود (دونوں سجدے)

ہر رکعت میں دو سجدے واجب ہیں۔

سوال:        میں کس طرح سجدے کروں؟

جواب:       اپنی پیشانی اور اپنے دونوں ہاتھوں کی ہتھلیاں اور دونوں گھٹنے اور دونوں پاؤں کے انگوٹھے زمین پر رکھو اور سجدہ کرنے میں شرط ہے کہ پیشانی ایسی چیز پر رکھو جو زمین سے ہو یا زمین سے اُ گتی ہو اور کھانے پہننے کے کام میں نہ آ تی ہو ۔

سوال:        ذرا مثال سے سمجھائیے کہ کھانے اور پہننے والی چیزوں پر کیوں سجدہ جائز نہیں؟

جواب:       پھل اور ترکاریاں ان پر سجدہ اس لئے  جائز نہیں ہے کہ وہ کھائی جاتی ہیںاور روئی اور کتان پر اس لئے سجدہ جائز نہیں کہ وہ پہنی جاتی ہیں ۔

سوال:        مثلاً میں کس چیز پر سجدہ کروں؟

جواب:       تم مٹی،ریت،کنکری اور لکڑی یا ان (درختوں کے) پتے کہ جو کھائے نہیں جاتے ان پر سجدہ کرو،تم اس کاغذ پر بھی سجدہ کرسکتے ہو کہ جو لکڑی یا روئی یا کتان سے بنایا گیا ہو سوکھی گھانس اور ان کے علاوہ بہت سی چیزوں پر بھی سجدہ کرسکتے ہو۔

گیہوں،جو،روٹی،تار کول،شیشہ پرسجدہ نہ کرو اور مٹی پر سجدہ کرنا افضل ہے،اور اس سے افضل (تربت حسین خاک شفاء) پر سجدہ کرناہے  اس پر سجدہ کرنے سے نماز کی فضیلت وشرف بڑھ جاتاہے۔

سوال:           اور اگر میں ان چیز وں کے(جس پر سجدہ صحیح ہے) نہ ہونے کی بناءپر یا خوف کی بناء پران کے علاوہ چیزوں پر سجدہ  کروں تو کیا حکم ہے؟

جواب:       اگر تم اس چیز کے نہ ہونے کی بناپر کہ جس پر سجدہ کرنا صحیح ہے یاوہ چیز تمہارے لئے فراہم نہیں ہے تو پھرتارکول پر سجدہ کرو،اگر یہ نہ ملے تو پھر جس پر چاہو مثلاً گپڑا، ہتھیلی یا اگر تم تقیہ کی حالت میں ہو،تو پھر تقیہ جس بات کا متقاضی ہو اس پر سجدے کرو۔

میرے والد نے یہ کہہ کر مزید فرمایا:

یہ بات بھولنا نہ چا ہئے کہ تمھارے سجدہ کی جگہ تمہارے گھٹنوں اور انگوٹھوں کی جگہ کے برابر ہونا چاہئے پس ایک دوسرے کو چار ملی ہوئی انگلیوں سے زیادہ بلند نہ ہونا چاہئے(اسی طرح تمہارے سجدہ کی جگہ تمہارے کھڑے ہونے کی جگہ سے بلند نہ ہونی چا ہئے)۔

سوال:        میں پیشانی دونوں ہاتھوں کی ہتھیلیاں دونوں پاؤں کے انگوٹھے اور دونوں گھٹنے زمین پر رکھ کر کیا کہوں؟

جواب:       تم سجدے میں جانے کے بعد (سبحان ربی الاعلی وبحمدہ) ایک مرتبہ کہو یا سبحان اللہ تین مرتبہ کہو یا اللہ اکبر یا الحمدللہ تین تین مرتبہ کہو یا ان کے علاوہ جو بھی ذکر اس مقدار کے مطابق کہو پھر اپنے سرکو بلند کرکے اطمینان کے ساتھ بیٹھو،جب تم مطمئن ہو کر بیٹھ جاؤ تو پھر دوسرا سجدہ کرو اور ذکر سجدے میں سے جو تم کو اوپر معلوم ہو اہو ،اس کو اختیار کرکے پڑھو۔

سوال:        اور اگر میں سجدہ میں پورا نہ جھک سکوں کسی مرض کی بناپر مثلاً؟

جواب:       جتنا تم جھک سکتے ہو اتنا جھکو اور وہ چیز کہ جس پر سجدہ صحیح ہے اس کو بلند رکھ کرپیشانی اس پررکھواور تمام اعضاء  سجدہ  کو انکی جگہ پر رکھو۔

سوال:        اگر میں اس پر بھی قادر نہ ہوں تو؟

جواب:       اپنے سرسے سجدے کی جگہ اشارہ کرو اگر یہ بھی نہ کرسکو تو اپنی آنکھوں سے اس طرح شارہ کرو کہ سجدہ میں جانے کے لئے آنکھیں بند کرو اور اٹھنے کے لئے آنکھوں کو کھول لو۔

ساتویں تشہد

اور ہر نماز کی دوسری رکعت کے دوسرے سجدہ کے بعد اور نماز مغرب اور نماز ظہرو عصرو عشاء کی آخری رکعت میں تشہد کا پڑھنا واجب ہے۔

سوال:        میں اس میں کیا پڑھوں؟

جواب:       تم کہو:

اَشْہَدُ اَنْ لاَّ اِلٰہَ اِلاَّ اللّٰہُ وَحْدَہ٘ لاَ شَرِیْکَ لَہ٘ٗ وَاَشْہَدُ اَنَّ مُحَمَّدًا عَبْدُہ٘ وَ رَسُوْلُہ٘ اَللّٰھُمَّ صَلِّ عَلیٰ مُحَمَّدٍ وَّ آلِ مُحَمَّدٍ

تم اطمینان سے بیٹھ کرصحیح صورت میں اس کو پڑھو۔

آٹھویں۔سلام

ہر نماز کی آخری رکعت میں تشہد کے بعد اطمینان سے بیٹھ کر سلام کا پڑھنا واجب ہے۔

سوال:        میں سلام میں کیا کہوں ؟

جواب:        اگر تم اس میں (السلام علیکم) ہی پڑھو تو کافی ہے اور اس میں اگر ورحمۃ اللہ وبرکاتہ  کا اضاضہ کردو تو افضل ہے، اور اس سے افضل یہ ہے کہ اس سے پہلے:

اَلسَّلاَمُ عَلَیْکَ اَیُّھَاالنَّببِیُّ وَرَحْمَةُ اللّٰہِ وَبَرَکَاتُہ٘ اَلسَّلاَمُ عَلَیْنَا وَعَلیٰ عِبَادِ اللّٰہِ الصَّالِحِیْنَ کہو۔

نماز کے یہی اجزا ہیں کہ جو مسلسل (ایک کے بعد ایک ادا کئےجائیں گے جس طرح میں نے ان کو تمہارے سامنے گنوایا اور بیان کیا ہے ایک کے بعد ایک ان میں بعض جزءکا تمسک بعض جزء سےہے اس کے اجزاء میں اتنا فاصلہ نہ ڈالا جائے کہ اس سے نماز کی وحدت اور ہیت میں خلل پڑجائے۔

سوال:        آپ نے مجھ سے قنوت کے بارے میں بیان نہیں کیا حالانکہ آپ اپنے ہاتھوں کو بلند کرکے نماز میں قنوت پڑھتے ہیں؟

جواب:        قنوت نماز پنجگانہ اور دوسری نمازوں میں ایک مرتبہ مستحب ہے،سوائے نماز شفع کے، دوسری رکعت میں دونوں سوروں کے بعد اور رکوع سےپہلے اپنے دونوں ہاتھوں کو قنوت کے لئے بلند کرو اگر تمہارا ارادہ اس مستحب کام کو کرنے کا ہوتو۔

سوال:        کیا کوئی ایسا ذکر معین ہے کہ جس کو میں قنوت میں پڑھوں؟

جواب:        نہیںتم قنوت میں قرآن کی آیتیں پڑھ سکتے ہوکہ جن میں خداوند عالم سے ایسی دعا کی گئی ہو کہ جس کو تم چاہتےہو،اوراپنے رب سے مناجات اور جو بھی دعاچاہو اس سے کرو ۔

 سوال   آپ سے مجھے معلوم ہو گیا کہ مجھے کس طرح نماز پڑھنا چاہئے اور کیا پڑھوں یا نماز کے ہر جزء  کو کس طرح انجام دوں اب چاہتا ہوں کہ آپ سے ان چیزوں کے بارے میں سوال کروں کہ جن سے نماز باطل ہوجاتی ہے۔

سوال:           اگر وہ چیز  یں مجھ سے سرزد ہوجائیں تو کیا مجھ پر دوبارہ نماز واجب ہے؟

جواب :          ہاں میں  ان کے بارے میں تم کو بتاتا ہوں ۔

۱       نماز کے ارکان  میں سے عمداً  نیت یا تکبیرة الاحرام یا رکوع یا سجود وغیرہ کا چھوٹ جانا۔

۲     درمیان نماز  نمازی سے حدث صادر ہونا ( اور اگرچہ آخری سجدہ کے بعد سہواً یا اضطراراً بھی حدث صادر ہوجائے)

 ۳     نمازی کا قبلہ سے عمداً تمام چہرہ یا تمام جسم منحرف ہوجائے۔

سوال :  اگر قبلہ سے انحراف اتنا کم ہوکہ جو استقبال قبلہ میں کوئی حرج پیدا نہ کرسکے تو؟

جواب:           اس سے نماز میں کوئی حرج نہیں لیکن یہ مکروہ ہے ۔

۴    جان بوجھ کر نمازی کا بلندآوازسے ایسا ہنسنا کہ جس میں آتارچڑھاؤ ہو(یعنی قہقہہ لگانا)۔

 ۵  جان بوجھ کر نمازی کا نماز میں امور دنیا کے لئے رونا،چاہے اس میں آواز ہو یا نہ ہو،لیکن امور آخرت کے لئے رونا ہوتو اس میں کو ئی) حرج نہیں ہے۔

۶     نماز کے دوران مصلی کاعمداً کلام کرنا چاہے ایک حرف ہی کیوں نہ ہوجب کہ وہ حرف مفہوم رکھتا ہو،چاہے اس سے معنی کے مفہوم کا ارادہ کیا گیا ہو جیسے کہ کہا جائے (قِ) کہ یہ وقی کا فعل امر ہے،یا معنی کے مفہوم کے علاوہ ارادہ کیا گیا ہو،جیسے اگر نماز کے دوران سوال کیاجائے کہ (حروف) ابجد کا دوسرا (حرف) کیا ہے تو تم کہو (ب) اور نماز کے باطل کرنے سےمستثنی ہے، نماز میں سلام کا سلام سے جواب دینا واجب ہے۔

۷    نمازی کا اثنائے نماز میں کھانا پینا(اگرچہ نماز کی شکل وصورت کو ختم نہ بھی کرے)

 ۸    نماز میں ایسا کام کرنا جو نماز کی شکل وصورت کو بگاڑدے جیسے کپڑے کا سلنایا بننا۔

۹     نمازی عمداً بغیر تقیہ خدا کے سامنے ادب اور خضوع کے قصد سے ہاتھ پر ہاتھ رکھے، اس کا نام تکفیرہے۔

۱۰     امام کے سورہ فاتحہ ختم کرنے کے بعد (یا فرادا نماز پڑھتے وقت ختم سورہ کے بعد( کلمہ (آمین) عمداً  کہنا۔

پھر اس کے بعد ہمارے پاس جو بہتر ین موضوع ہے کہ جس کی طرف میں اشارہ کروں گا وہ نماز میں شک ہے۔

سوال:                 کیا نماز میں شک کرنا نماز کو باطل کردیتا ہے؟

جواب:           نماز میں شک کرنا تمام حالات میں اورہمیشہ نماز کو باطل نہیں کرتاہاں،بعض شکوک نماز کو باطل کرتے ہیں،اور بعض شکوک قابل علاج ہیں بعض شکوک کی پرواہ نہ کرنی چاہئے وہ مہمل ہیں۔

  میں عام طریقہ سے تم کو کچھ عام قاعدہ جو شک کے کچھ حالات کوشامل ہیں بتائے دیتاہوں۔

پہلا قاعدہ

جو بھی نماز کے بعد نماز کے صحیح ہونے میں شک کرے اس کی نماز کو صحیح سمجھاجائے گا۔

سوال:         مثلاً؟

جواب:           جیسے تم نے نماز صبح پڑھنے کے بعد شک کیا کہ دورکعتیں پڑھی ہیں یا زیادہ یا دوسے کم پڑھی ہے تو ایسی صورت میں تم کہو کہ میری نماز صحیح ہے۔

دوسرا قاعدہ

جو کوئی نماز کے کسی ایسے جزءکے صحیح ہونے کے بارے میں شک کرےکہ اس کو بجالایا ہے، تو وہ جزء صحیح سمجھا جائے گا،اور نماز بھی صحیح ہوگی ۔

سوال:        مثلاً؟

جواب:           تم نے اپنی قرائت کی صحت کے بارے میں شک کیا،یا رکوع کے بارے میں یا سجدہ کی صحت کے بارے میں شک کیا قرأت تمام ہونے کے بعد،رکوع  یا سجدہ انجام دینے کے بعد، تو تم کہو کہ میری قرائت صحیح ہے میرارکوع میرا سجدہ صحیح ہے پھر میری نماز اس کے بعد صحیح ہے۔

تیسرا قاعدہ

کسی نے نماز کے اجزاء میں سے کسی جزء کے بارے میں بعد والے جزء میں داخل ہونے کے بعد شک کیا تو بنا اس پر رکھی جائیگی کہ وہ مشکوک جزء بجالایاگیا ہے اور اس کی نماز بھی صحیح ہے بلکہ اگر وہ شرعی طور پر اگلے جز ء میں داخل نہیں ہوا ہے اور بالفرض اگلے جزء میں پوری طرح داخل ہونے سے عمداً خلل انداز ہوا ہے تو بھی صحت پر بنا رکھنا کافی ہے( یعنی اگلے جزء میں ابھی پورے طورسے عمداً داخل ہونے میں دیر کی تو بھی جزء مشکوک کے بجالائے جانے پر بنا رکھی جائیگی)

سوال:           مثال سے سمجھائیے؟

جواب:           مثلاً تم نے سورہ الحمد کے بارے میں شک کیا کہ پڑھایا نہیں،حالانکہ تم دوسرے سورہ کے پڑھنے میں مشغول ہوتو کہو میں نے اس کو پڑھا ہے اور پھر اپنی نماز کو جاری رکھو اور اسی طرح تم خم ہونے کی حالت میں ہو رکوع کے لئے اور تم کو شک ہوا کہ میں نے سورہ پڑھایا نہیں تو تم کہو کہ میں نے سورہ کو پڑھا ہے،اور اپنی نماز کو جاری رکھو، پس تمہاری نماز صحیح ہے۔

چوتھا قاعدہ

جو زیادہ شک کرے اور شک میں فطری حالت سے زیادہ تجاوز کرجائے تو اس کا شک مہمل ہے وہ اپنے شک کی طرف اعتناء نہ کرے اور نہ اس کی طرف متوجہ ہو پس اس کی وہ نماز کہ جس میں اس نے شک کیا ہے صحیح ہے۔

سوال:         مثلاً؟

جواب:           مثلا تم نماز صبح کی رکعتوں کی تعداد میں زیادہ شک کرتے ہو تو تمہارا یہ شک مہمل ہے تم کہو میری نماز صحیح ہے،اور جب تمہارا یہ شک سجدوں کے بارے میں ہو کہ میں نے ایک سجدہ کیا یا دو، تو کہو میں نے دونوں سجدے کئےہیں،پس اپنے شک کی طرف توجہ نہ دو اور نہ اس کو کوئی اہمیت دو،بلکہ تم اپنی نماز کے صحیح ہونے کا اعتبار کرو اور اسی طرح وہ کثیر الشک کہ جو ہمیشہ نماز میں شک کرتا ہے اس کا شک بھی مہمل ہے اور اس کی نماز کو صحیح اعتبار کیا جائیگا۔۔ہمیشہ ۔۔ہمیشہ

سوال:        میں کس طرح پہچانوں کہ میں زیادہ شک کرنے والا ہوں ۔

جواب:           کثیر الشک(زیادہ شک کرنے والا) اپنے کو آسانی سے پہچان لیتا ہے اس کے لئے عام لوگوں کے سامنے اس کا کثیرا الشک ہونا ہے(اور وہ تین نمازوں میں شک نہ کرے) اگر وہ تین نمازوں میں پے درپے شک کرے تو اس کے کشیر الشک ہونے کے لئے کافی ہے۔

پانچواں قاعدہ

ہروہ شخص جو نماز صبح کی رکعتوں یا نماز مغرب کی رکعتوں،یا چار رکعتی نمازوں میں سے پہلی اور دوسری رکعتوں میں شک کرے اور اس کا ذہن ان دواحتمالوں میں سے کسی ایک کی طرف ترجیح نہ دے اور نہ اس کا ذہن رکعتوں کے عدد کو معین کرے بلکہ وہ اسی طرح متحیر اور مشکوک رہے،اور رکعتوں کو نہ جانے کہ کتنی  ہوئیں تو اس کی نماز باطل ہے۔

سوال:         مثلاً؟

جواب:        مثلاً وہ نماز صبح پڑھ رہا ہے اور اس حالت میں اس کو شک ہوا کہ اس کی پہلی رکعت ہے یا دوسری تھوڑا سوچا اور فکر کیا مگر اس کی کچھ سمجھ میں نہ آیا کہ پہلی رکعت ہے یا دوسرے تو اس کی نماز باطل ہے۔

سوال:        اگر دونوں احتمالوں میں سے اس کے ذہن میں ایک  احتمال کو ترجیح حاصل ہوگئی ،تو کیاوہ اپنےذہن کے احتمال کو ترجیح دے کہ وہ پہلی رکعت ہے؟

جواب:        اگر اس کے ذہن میں کسی معین رکعت کو ترجیح حاصل ہوگئی ہو تو وہ اپنے اس غالب احتمال کے تقاضہ کے مطابق عمل کرےگا(اس لئے کہ تمہارے سوال میں پہلی رکعت کے رجحان کا احتمال تھا)اس بنا پر وہ دوسری رکعت بجالائے اور نماز کو تمام کرے،اس کی نماز صحیح ہے اور اسی طرح نماز مغرب میں اور چار رکعتی نمازوں کی پہلی اوردوسری کعتوں میں یہی حکم ہے۔

سوال:        اب مجھے نماز صبح اور مغرب اور ظہر وعشاء کی نمازوں میں پہلی دو رکعتوں میں شک کرنے والے کا حکم معلوم ہوگیا لیکن چاررکعتی نمازوں کی تیسری اور چوتھی رکعتوں میں شک کرنے والے کا کیا حکم ہے؟

جواب:           جب شک کرنے والے کے ذہن میں کچھ رکعتوں کی تعداد کو ترجیح حاصل ہوگئی ہو تو وہ اپنے اسی ظن کے مطابق عمل کرے گا کہ جس کا ذہن میں رحجان حاصل ہوا ہے۔

سوال:        اور اگر وہ اپنے تحیر اور شک پر باقی رہے تو؟

جواب:        اس وقت زیادہ تفصیل سے بیان کرنے کی ضرورت ہے کیونکہ یہاں پرہر ایک جگہ کا مخصوص حکم ہے میں یہاں مختصر طور پر کچھ کو بیان کرتا ہوں۔

(۱)    جس شخص نے تیسری اور چوتھی رکعت میں شک کیا اس وقت وہ چار رکعت پر بنا رکھے اور اپنی نماز تمام کرے پھر نماز کے بعد دو رکعت نماز بیٹھ کریا ایک رکعت نماز کھڑے ہو کر پڑھے اس نماز کونماز احتیاط کہتے ہیں۔

(۲)    دوسرے سجدے میں داخل ہونے کے بعد چوتھی اور پانچویں رکعت میں اگر کوئی شک کرے (یعنی اپنی پیشانی سجدہ کرنے والی چیز پر رکھے چاہے ابھی  ذکر شروع نہ بھی کیا ہو) تو جار پر بنا رکھے اور نماز کو تمام کرنے کے بعد دو سجدہ سہو بجالائے۔

(۳)    دوسرے سجدے میں داخل ہونے کے بعد اگر کوئی دوسری اور تیسری رکعت میں شک کرے تو تین پر بنا رکھے اور اس کے بعد چوتھی بجالائے،اس کے بعد نماز کو ختم کرکے (ایک رکعت کھڑے ہو کر) نماز احتیاط پڑھے ۔

سوال:        نماز احتیاط کس طرح پڑھی جائیگی؟

جواب:        اپنی نماز کو تمام کرنے کے بعد داہنے اور بائیں توجہ کئے بغیر اور مبطلات نماز میں سے کسی مبطل کو انجام دیئے بغیر نماز احتیاط کو شروع کرے تکبیر کہے پھر سورہ الحمد پڑھے (آہستہ) اور اس میں دوسرا سورہ واجب نہیں ہے،پھر رکوع کرے،پھر سجدہ کرے،اگر نماز احتیاط ایک رکعت پڑھ رہا ہے تو تشہد وسلام پڑھ کر نماز کو تمام کرے اور اگر دورکعت  نماز احتیاط واجب تھی تو دوسری رکعت کو،پہلی رکعت کی طرح بجالا ئے۔

سوال:        سجدہ سہو جس کو آپ نے ذکر کیا( وہ کس طرح ادا کیا جائیگا؟

جواب:        اپنی نماز کے بعد نیت کرو اور سجدہ میں جاؤ اور افضل یہ ہے کہ سجد ہ میں جانے سے پہلے تکبیر کہو اور سجدہ میں بسم اللہ باللہ السلام علیک ایھا النبی ورحمة اللہ وبرکاتہ پڑھو پھر سجدے سے سراٹھا کر بیٹھو پھر دوبارہ سجدے میں جاؤ پھر سر اٹھاؤ اور تشہدو سلام پڑھ کر سجدۂ سہو کو تمام کرو۔

میرے والد نے مزید  فرمایا۔

لیکن سجدہ سہو کے بارے میں فقط یہ نہ سمجھو  کہ یہ دونوں سجدۂ سہو چوتھی اور پانجویں رکعت میں شک کرنے کی بناپر واجب ہوتا ہے بلکہ اس کے علاوہ دوسری جگہیں بھی ہیں اور وہ یہ ہیں۔

۱لف   جب  تم نماز میں سہواًیا بھول کر کلام کرو۔

ب      جب تم ایسی جگہ سلام بھول کر کہو جہاں سلام کہنے کی جگہ نہیں تھی اور کہو(السلام علیک ایھا النبی ورحمۃ اللہ ربرکاتہ یا کہو السلام علینا وعلی عباد اللہ الصالحین السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ)

ج            اگر تم نے بھول کر نماز میں تشہد کو نہ پڑھا تو نماز کے بعد دوسجدۂ سہوبجالاؤ اور افضل یہ ہے کہ سجدۂ سہو کے ساتھ تشہد کی قضا بھی کرو۔

د       (تم کو نماز کے بعد اجمالاً معلوم ہو کہ تمہاری نماز میں کچھ کمی یا زیادتی ہوگئی ہے ساتھ ہی یہ کہ تمہاری نماز محکوم بصحت ہے) تو ایسی صور ت میں دوسجدہ سہو تم پر لازم ہے اور افضل تمہارے لئے یہ ہے کہ اگر تم نماز میں ایک سجدہ  بھول گئے ہو تو دو سجدہ سہو بجالاؤ ،اس کے ساتھ ہی بعد نماز اس کی قضا بھی بجالاؤاور ایسے ہی ہے اگرتم  بیٹھنے کی جگہ کھڑے یا کھڑے ہونے کی جگہ بھول کر بیٹھ گئے، بلکہ افضل یہ ہے کہ تم اپنی نماز میں ہر کمی وزیادتی کی لئے  سجدہ سہو کرو۔

جتنی مرتبہ سجدہ واجب ہوا ہے اتنی ہی مرتبہ اس کو بجالایا جائے یعنی دو مرتبہ یا اس سے زیادہ واجب ہوا ہے تو تم اتنی مرتبہ سجدہ کرو ہماری نماز کی گفتگو جب ختم ہوگئی تو میں نے اپنے والد سے تقاضہ کیا کہ وہ میرے سامنےبطور درس اور تطبیق کے طور پر چار رکعتی نماز کہ جو نماز پنجگانہ میں سے سب سے زیادہ طولانی ہے پڑھیں،تاکہ میں نزدیک سے ملاحظہ کروں کہ میرے والد کس طرح تکبیر کہتے ہیںکس طرح قرائت ورکوع وسجود وتشہد اور سلام کو انجام دیتے ہیں،میری اس یاد دہانی کے بعد میرے والد ہر روز مجھ کو سیکھانے کے لئےمیرے سامنے نماز عشاء پڑھتے ہیں اور یہ نماز چاررکعت بلند آواز والی ہے میں نے اپنے دل میں کہا کہ اب میں خود دیکھوں گا کہ وہ کس طرح نماز پڑھتے ہیں اور جس وقت میرے والد اس بلند آواز والی چاررکعتی نماز کو شروع کرتے تو میں اپنے تمام حواس کو سمیٹ کر نہایت ہوشیاری کے ساتھ ان کی نماز کے تمام حرکات کو دیکھتا اور اب آپ سے بیان کرتا ہوں کہ میرے والد کس طرح نماز پڑھتے ہیں۔

پہلے ا نھوں نے وضوء کیا پھر وہ اپنے مصلے پر روبقبلہ کھڑے ہوگئے وہ خاشع تھے پس انہوں نے نماز کے لئے اذان واقامت کہی پھر نماز کو شروع کیاپس انہوں نے اللہ اکبر کہی پھر سورہ الحمد کوپڑھنے کے بعد سورہ قدر کو پڑھا جب وہ سورہ تمام ہوگیا کھڑے ہوئے تھے اور رکوع میں خم ہونے والے تھے اور جب پوری طرح رکوع میں پہنچ گئے تو سبحان ربی العظیم وبحمدہ کہتے ہوئے ذکر کیا اور رکوع کی حالت میں ہی جب انہوں نے ذکر کے آخری حرف کو تمام کیا تو وہ سیدھے اپنے قدموں پر کھڑے ہوگئے اور جب وہ قیام کی حالت میں تھے تو سجدہ کے لئے جھکے اور جب سجدے میں پہنچے تو سبحان ربی الا علی وبحمدہ کہہ کر ذکر سجدہ کیا اور سجدہ ہی کی حالت میں ذکر کے آخری حرف کو تمام کرکے سجدہ سے سراٹھاکر  سیدھے بیٹھ گئے پھر دوسرے سجدے کے لئے جھکے پس اس میں بھی وہی ذکر کیا جو پہلے سجدہ میں کیا تھا سبحان ربی الاعلی وبحمدہ پھر سر کو سجدہ سے بلند کرکے بیٹھے،تاکہ دوسری رکعت کے لئے  کھڑے ہوں،اور جس وقت قیام میں پہونچے تو سورہ حمد اور اس کے بعد اس مرتبہ سورہ توحید کوپڑھا،جب اس کی قرائت سے فارغ ہوئے تو قنوت کے لئے  ہاتھوں کو بلند کیا اور قنوت میں قرآن کی اس آیت کریمہ کو پڑھا رب اغفرلی ولوالدی ولمن دخل بیتی مومنا وللمومنین والمومنات ولاتزد الظا لمین الاتباراً۔

پھر قنوت سے ہاتھ گراکر رکوع کے لئے خم ہوئے اور جس وقت رکوع میں پہونچ گئے سبحان ربی العظیم وبحمدہ کو پڑھا،پھر سیدے کھڑے ہوئے تاکہ سجدہ کے لئے خم ہوں اور جس وقت سجدہ میں پہونچے تو سبحان ربی الاعلی وبحمدہ کو پڑھا اور جب سجدے سے اٹھ کر بیٹھ گئے تو تشہد کو پڑھا اَشْہَدُ اَنْ لاَّ اِلٰہَ اِلاَّ اللّٰہُ وَحْدَہ٘ لاَ شَرِیْکَ لَہ٘ وَاَشْہَدُ اَنَّ مُحَمَّدًا عَبْدُہ٘ وَ رَسُوْلُہ٘ اَللّٰھُمَّ صَلِّ عَلیٰ مُحَمَّدٍ وَّ آلِ مُحَمَّدٍ

اور جب تشہد سے فارغ ہوئے تو سیدھے کھڑے ہوگئےتیسری رکعت کے لئے  قیام میں پہونچنے کے بعد انھوں نے سبحان اللہ والحمدللہ ولاالہ الا اللہ واللہ اکبر کی تسبیح کو تین مرتبہ پڑھا،مگر آہستہ آواز میںپھر رکوع سے کھڑے ہوئے اور سجدے کے لئے جھکے اور اس میں وہی پڑھا جو پچھلے سجدوں میں پڑھا تھا سبحان ربی الاعلی وبحمدہ پھر بیٹھ کر دوسرے سجدے میں چلے گئے پس اس میں بھی وہی پڑھا تھا،پھر چوتھی رکعت کے لئے کھڑے ہوئے جو آخری رکعت تھی پس اس رکعت میں وہی تسبیح پڑھی جو پچھلی رکعت میں پڑھی تھی سبحان اللہ والحمدللہ ولاالہ الا اللہ واللہ اکبر کو تین مرتبہ پڑھا ۔

 پھر اطمینان سے بیٹھ کر تشہد میں وہی پڑا کہ جو پہلے تشہد میں پڑھا تھا:

اَشْہَدُ اَنْ لاَّ اِلٰہَ اِلاَّ اللّٰہُ وَحْدَہ٘ لاَ شَرِیْکَ لَہ٘ وَاَشْہَدُ اَنَّ مُحَمَّدًا عَبْدُہ٘ وَ رَسُوْلُہ٘ اَللّٰھُمَّ صَلِّ عَلیٰ مُحَمَّدٍ وَّ آلِ مُحَمَّدٍ

اور جب تشہد کو ختم کیا تو نبیؐ پر سلام پڑھا:

اَلسَّلاَمُ عَلَیْکَ اَیُّھَاالنَّبِیُّ وَرَحْمَةُ اللّٰہِ وَبَرَکَاتُہ٘ اَلسَّلاَمُ عَلَیْنَا وَعَلیٰ عِبَادِ اللّٰہِ الصَّالِحِیْنَ،اَلسَّلاَمُ عَلَیْکُمْ وَرَحْمَةُ اللّٰہِ وَبَرَکَا تُہ٘

اس طرح میرے والد نے نماز عشاء کو پڑھااسی نماز کے مثل نماز ظہرو عصر ہے کیونکہ وہ دونوں بھی چار رکعت ہیں سوائے اس کے کہ ان دونوں کی پہلی دو رکعتوں میں دونوں سورہ کی قرائت آہستہ آواز میں ہوتی ہے۔

کبھی میں نے اپنے والد کو نماز مغرب کو پڑھتے ہوئے دیکھا ہے میں نے ان کو نماز عشاء ہی کی طرح نماز مغرب کو پڑھتے ہو ئے پایا ہے مگر یہ کہ تیسری رکعت کے دوسرے سجدے کے بعد بیٹھ کر وہ تشہد پڑھتے اور سلام کہہ کر اپنی نماز کو ختم کردیتے تھے(چونکہ نمازمغرب کی تین رکعت ہے)

اسی طرح میں نے ان کو نماز صبح بھی پڑھتے ہوئے دیکھا ہے جس طرح نماز عشاء پڑھتے ہیں مگر یہ کہ دوسری رکعت کے دوسرے سجدہ کے بعد تشہد اور سلام پڑھنے کے بعد نماز تمام کردیتے تھے، کیونکہ نماز صبح دورکعت ہے۔

اسی طرح میرے والد نماز پنجگانہ کو پڑھتے تھے مگر میرے سامنے (نماز عشاء کے علاوہ) اور نمازیں نہ پڑھتے کہ جن کو دیکھ کر محفوظ کرتا،اور ان کے بارے میں کچھ سوچتا اب میں آپ کے سامنے اپنے والد کی نمازوں کی بعض خصوصیات کو بیان کروں گا،وہ نیچے دی ہوئی خصوصیات کے ساتھ نماز پڑھتے ہیں۔

۱      نماز کو اول وقت پڑھنے کے زیادہ حریص ہیں (اور پابندی وقت کا خاص خیال رکھتے ہیں) پس وہ نماز ظہر کو مثلاً جب ظہر کا وقت (زوال) ہوتا ہے پڑھتے ہیں اسی طرح نماز مغرب کو اول وقت پڑھتے ہیں اورایسےہی تمام نمازوں کو اپنے اپنے وقت پر پڑھتے ہیں اور جس وقت میں نے نماز کو اول وقت پڑھنے کی جلدی کا سبب پوچھا تو انھوں  نے جواب میں امام صادق علیہ السلام کی حدیث کو بیان فرمایا کہ جس میں آپ نے ارشاد فرمایاہے۔

اول وقت کی فضیلت آخر وقت پر ایسی ہی ہے  جیسے آخرت کو دنیا پر فضیلت ہے فضل الوقت الاول علی الاخیر کفضل الا خرة علی الدنیا ۔

۲      اورجس وقت اپنے پروردگار کے سامنے نماز پڑھنے کے لئےکھڑے ہوتے تو آپؑ پر خضوع وخشوع وتذلل کے آثار ظاہر ہوجاتے اور کبھی کبھی اپنے نفس سے سوال وجواب کرتے،لیکن ذرا بلند آواز سے( قد افلح المومنون الذین ھم فی صلاتھم خاشعون۔)

گویا نماز شروع کرنے سے پہلے اپنے نفس کو اس پر آمادہ کرتے ہیں اسی طرح اپنے قلب کو نماز میں اللہ کے لئے خشوع کی اہمیت کو بتاتے ہیں۔

۳      اور جب صبح کی نماز پڑھتے ہیں تو اس سے پہلے دورکعت نماز پڑھتے،اور ظہر کی نماز سے پہلے آٹھ رکعت، دودورکعت کرکے مشل نمازصبح کے پڑھتے،اور اسی طرح عصر کی نماز سے پہلے اتنی ہی مقدار میں نماز پڑھتے اور نماز مغرب کے بعد دو دورکعت کرکے مثل نمازصبح کے چار رکعت نماز پڑھتے اور عشاء کے بعد دورکعت نماز بیٹھ کر پڑھتے ہیں۔

ایک مرتبہ میں نے ان نمازوں کے بارے میں معلوم کیا تو فرمایا(وہ نوافل)ہیں کہ جن کے متعلق امام حسن عسکری علیہ السلام نے فرمایا:نوافل کا پڑھنا مومن کی علامتوں میں سے ایک علامت ہے۔

۴      جملہ (اللہ اکبر) کے کلمہ (اکبر) میں جو ہمزہ ہے وہ ھمزہ قطع ہے پس جس وقت بھی تم تکبیر کہو تو تمہارے اوپراس ھمزہ کا واضح اور آشکار کرنا  واجب ہے جس وقت میرے والد نے یہ فرمایا:تو میں نے ڈرتے ہو ئےان سے ایک مرتبہ کہا بعض لوگ  اس ہمزہ کو واؤ کے مشابہ ادا کرتے ہیں جیسے کہ یہ جملہ اللہ اکبرہو۔)

تو فرمایا: کہ ان کی طرح ادا کرنے سے تم بچو کیونکہ وہ غلطی پر ہیں اور میرے والد نے مزید فرمایا: سورہ فاتحہ کی آیت (صراط الذین انعمت علیہم) میں (انعمت) کے ہمزہ کو ادا کرنا تم پر واجب ہے کہ اس کو پڑھتے وقت اپنی زبان پر صاف واضح اور آشکار ادا کرو،اور اس جیسے تمام ہمزہ جیسے الاعلی کا ہمزہ کہ جو سجدہ میں سبحان ربی الاعلی وبحمدہ پڑھتے ہیں ہمزہ قطع ہے،تم پر واجب ہے کہ اس کو پڑھتے وقت زبان پر واضح وروشن ظاہر کرو۔

۵      میرے والد نے فرمایا جب تم سورہ توحید کی آیہ کریمہ (قل ھواللہ) کی تلاوت کرو تو کلمہ(احد) کی دال پر وقف کروپھر اس کے بعد والی آیت (اللہ الصمد) کی تلاوت سے پہلے تھوڑا ٹھہرو ،یہ تمہارے لئے سہل اور آسان ہے۔

۶      میرے والد اپنی نماز میں کلموں کے آخر کو حرکت دیتے تھے جب کہ وہ اپنے کلام اور ذکر کو آگے بڑھاتے اور جاری رکھتے اور اسی کے ساتھ جب کہیں روکنا چاہتے تو کلمہ کے آخری حرف کو ساکن کردیتے تھے۔

۷      میں نے اپنے والد سے ایک مرتبہ سوال کیا جب آپ بسم اللہ الرحمن الرحیم کی تلاوت کرتے ہیں تو میں نے آپ کو (رحمٰن) کے نون کو زیرکے ساتھ پڑھتے ہوئے سنا ہے،اوراسی طرح (الرحیم) کی (میم) کو زیر کے ساتھ پڑھتے ہوئے سنا ہے اور آپ الرحمٰن الرحیم،مالک یوم الدین سورہ حمد کی بھی اسی طرح تلاوت کرتے ہیں حالانکہ اکثر لوگوں کو میں نے پیش کے ساتھ پڑھتے ہو ئےسنا ہے۔اسی طرح جب آپ سورہ حمد میں خداوند عالم کے اس قول ایاک نعبد کی قرائت کرتے ہیں تو کلمہ(نعبد)کی (ب)کو پیش کے ساتھ پڑھتے ہوئے سنا ہے جب کہ اکثر لوگ نماز کی حالت میں اس کو زیر کے ساتھ پڑھتے ہیں ۔

انھوں نے کہا تم نے نحو اور اس کے قواعدکو نہیں پڑھی ہے؟

میں نے کہا :میں نے نحو پڑھی ہے مگر اتنی مشکل نہیں۔

انھوں نے فرمایا:  نحو کے علماء (الرحمن الرحیم)کے دونوں کلموں کی حرکت میں کیا کہتے ہیں؟

میں نے کہا وہی زیر جیسا کہ آپ نے فرمایا ۔

تو انھوں نے کہا: قرآن کریم کا ایک نسخہ میرے پاس لاؤ پس میں نے کتاب اللہ کا ایک نسخہ جومیرے قریب تھا اٹھا کر ان کو دیا۔

انھوں نے فرمایا: سورہ حمد نکالو اور اس کو دیکھو،پس میں نے سورہ حمد کو نکالا تو (الرحمن الرحیم) کے دونوں کلموں کے آخر میں زیر تھا اور (ایاک نعبد) کے کلمہ کی (باء) پر زیر نہیں ہے میں نے کہا جس طرح آپ نے پڑھا ہے ویساہی ہے انہوں نے کہا کہ جس طرح کتاب خدا میں (حرف)پر حرکت ہے اسی طرح پڑھو اور جو غلط قرائت مشہور ہے اس سے محفوظ رہو۔

۸      اور میرے والد رکوع اور سجودمیں ذکر اس وقت تک نہیں پڑھتے جب تک ان میں جاکر ٹھہرنہ جائیں اور اپنے سر کو بلند نہیں کرتے مگر ذکر کے تمام کرنے کے بعد۔

۹      اور جب اپنے سر کو پہلے سجدہ سے اٹھاتے ہیں تو تھوڑی دیر بالکل ٹھیک سے بیٹھ کر دوسرے سجدے میں جاتے ہیں اور اسی طرح وہ دوسرے سجدے سے سر اٹھانے کے بعد کرتے ہیں،یعنی بیٹھتے ہیں پھر بعد والی رکعت کے لئے کھڑے ہوتے ہیں۔

۱۰    میں نے ان سے ایک مرتبہ سوال کیا کہ میں آپ کو دعا کرتے ہوئے سنتا ہوں کہ آپ اپنےلئے اپنے والدین اور تمام برادران مومنین کے لئے  نماز کے بعد دعا کرتے ہیں تو آپ نے فرمایا۔امیرالمومنین علیہ السلام کا ارشاد ہے۔

من دعا لاخوانہ امن المومنین و المومنات و المسلمین و المسلمات و کل اللہ بہ عن کل مومن ملکا یدعو لہ

جو شخص اپنے مومن،مومنہ اور مسلمان بھائیوں اور بہنوں کے لئے دعا کرے خداوندعالم ہر مومن کے بدلے اس پر ایک فرشتہ مقرر کرتا ہے جو اس کے لئے دعا کرتارہتاہے ۔

۱۱    میں نے سوال کیا کہ میں آپ کو ہر فریضہ کے بعد تسبیح پڑھتے دیکھتا ہوں،آپ نے فرمایا:ہاں وہ تسبیح زہرا علیہا السلام ہے اور یہ تسبیح جناب رسول خدا ﷺنے جناب فاطمہ زہرا(س) کو تعلیم کی تھی اور وہ (اللہ اکبر )۳۴/ مرتبہ (الحمدللہ) ۳۳/ مرتبہ (سبحان اللہ)۳۳ /مرتبہ ہے پس ان سب کی تعداد سوہوگی ۔

سوال:        کیا تسبیح زہراء(س) کی فضیلت ہے؟

جواب:        ہاں، امام صادق  علیہ السلام  سے روایت کی گئی ہے کہ آپ نے ابی ہاورن مکفوف سے فرمایا اے ابا !ہاورن ہم اپنے بچوں کو تسبیح زہراء پڑھنے کا اس طرح حکم دیتےہیں جس طرح نماز پڑھنے کا حکم دیتے ہیں پس اس کا پڑھنا لازم ہے پس جس بندہ نے اس کو لازمی طور پر نہیں پڑھا اس نے(ہم سے) شقاوت کی۔

۱۲    کبھی کبھی میرے والد نماز ظہر کے بعد عصر پڑھتے یا نماز مغرب کے بعد فوراً عشاء پڑھتے اور کبھی دو نمازوں کے درمیان فاصلہ ڈال دیتے نماز ظہر کے بعد اپنے ضروریات کو انجام دیتے اور جب نماز عصر کا وقت آتاتو نماز عصر پڑھتے اسی طرح نماز مغرب وعشاء کو بھی فاصلہ سے پڑھتے ۔

اور جس وقت میں ان سے اس بارے میں معلوم کرتا تو فرماتے تم کو اختیار ہے چاہے ان دونوں کے درمیان فاصلہ ڈالو یا بغیر فاصلہ کے پڑھو۔

۱۳    میں نے اپنے والد سے عرض کیا کہ جب آپ سورہ قدر پڑھتے ہیں تو میں سنتا ہوں کہ آپ (انانزلناہ فی لیلة القدر) کو پڑھتے وقت حرف لام کو ظاہر کرتے ہیں اور بعض لوگ اس کو اصلاً ظاہر نہیں کرتے جیسے معلوم ہوتا ہے کہ حرف لام موجود ہی نہیں ہے،وہ (انزلناہ) پڑھتے ہیں اور سبحان ربی العظیم وبحمدہ کو جب آپ پڑھتے ہیں تو سبحان کی سین کو پیش اور (ر)کو زبر پڑھتے ہیں حالانکہ میں بہت لوگوں سے سنا ہے جو آپ کی طرح نہیں پڑھتے؟

آپ نے فرمایا: کیا میں نے تم سے نہیں کہا کہ تم اپنی قرائت کی طرف متوجہ رہو۔

 

 

index