حج کا سیاسی پھلو

back

 

 

اسلام کے عظیم فقھاء میں سے ایک بزرگ فقیہ کے فرمان کے مطابق جیسا کہ حج کے مراسم اور اعمال عمیق اور خالص ترین عبادت کو پیش کرتے ھیں وہ ایسے ھی حج اسلامی اھداف و اغراض و مقاصد کی پیش رفت کے لئے ایک مؤثر وسیلہ بھی ھے خدا کی طرق توجہ اور روح عبادت ھے اور خدا کی مخلوق پر توجہ روح سیاست ھے ،اور حج کی یہ دونوں چیزیں ایک دوسرے سے اس طرح پیوستہ ھیں کہ ایک ھی چیز محسوس ھوتی ھے ۔

حج مسلما نوں کو متحد کرنے کا ایک مؤثر وسیلہ اور عمل ھے ۔

حج تعصبات ، نسل پرستی و اختلافات اور جغرافیائی سرحدوں میں محدود اور منحصر ھونے سے چھٹکارے کا بہترین ذریعہ ھے ۔

حج مسلمانوںکے درد و غم اور مشکلات سے آگاھی اور ان کے حل کی چارہ جوئی کے لئے بہترین ذریعہ ھے۔ 

حج رکاوٹ اور بندشوں کو توڑنے اور ظالمانہ نظا م کو ختم کرنے کا وسیلہ ھے،اس ظالمانہ نظام کو جو دنیا کی قدرتمند اور ظالم حکومتوں کی طرف سے اسلامی حکومتوں میں رائج کیا گیا ھے ۔

حج اسلامی ممالک کی سیاسی جڑوں کو ایک جگہ سے دوسری جگھوں پر پھونچانے کا بہترین وسیلہ ھے ۔

حج غلامی او رسامراجی زنجیروں کو توڑنے اور مسلمانوں کو غلامی ظالمانہ نظام سے نجات دلانے کا مؤثر وسیلہ ھے یھی وجہ تھی کہ اس زمانہ میں جب بنی امیہ اور بنی عباس کے ظالم و جابر حکمراں، اسلام کی مقدس سرزمین پرقابض تھے اور مسلمانوں کے ھر طرح کے میل جول کو تحت نظر رکھتے تھے تا کہ ھر آزادی کی تحریک کو کچل دیں اور اعتراض کی ھر آواز کو گلوںھی میں گھونٹ دیں ایسے دردناک زمانہ میں ایام حج کا آنا آزادی اوراسلامی معاشرے کے ایسے روابط اور مختلف سیاسی مسائل کو ایک دوسرے کے سامنے پیش کرنے کے لئے ایک دریچہ کا کام دیتا تھا ۔

اس وجہ سے حضرت علی (ع) حج کے فلسفہ کے متعلق فرماتے ھیں اَلحَجُّ تَقوِیَةُ الدِّینِ خداوند عالم نے حج کو دین کے لئے باعث تقویت بنایا ھے ،ایک غیر مذھب اور مشھور سیاست داں کا یہ کھنا بلاوجہ نھیں ھے کہ وہ اپنی پُر معنی گفتگوکے دوران کہتا ھے کہ افسوس ، مسلمانوں کے حال پر کہ اگر حج کے معنی نہ سمجھیں اور افسوس اسی طرح مسلمان دشمنوں پر کہ اگر حج کے واقعی معنی کو درک کریں۔یھاں تک کہ اسلامی روایات میں حج کو ضعیف اور کمزور افراد کے لئے جھاد کے نام سے یادکیا گیا ھے ، حج ایسا جھاد ھے کہ جس میں بوڑھے ، ناتوان مرد اور کمزور عورتیں بھی شریک ھو کر اسلام کی عظمت و جلال کودنیا کے سامنے پیش کرسکتے ھیں ، اور خانہ کعبہ کے ارد گرد نمازیوںکی صفوں میں کھڑے ھوکر وحدت و تکبیر کی آواز بلند کرکے دشمن کی کمرتوڑسکتے ھیں اور دشمنوں کے ایوانوں میں لرزہ پیدا کرسکتے ھیں ۔[1]

حج اور خانہ کعبہ کا طواف شرک سے نفرت اور مشرکوں سے بیزاری کابہترین موقع ھے

 اگرچہ ھر طرح کی عبادت شرک سے نفرت اور طاغوت سے بیزاری ھی کا نام ھے ، اسی طرح حج اور خانہ کعبہ کا طواف بھی نمازھی کے مثل ھے یا یہ کہ اسمیں بھی نماز ھے اَلطَّوافُ بِالبَیتِ فَاِنَّ فِیہِ صَلاةٌ [2]

یہ روایت بھی اسی اصل اور بنیاد کی حکایت کر رھی ھے ( یعنی طاغوت سے بیزاری اورشرک سے نفرت ) چونکہ حج ایک مخصوص عبادت ھے جس میں سیاست کی بھی آمیزش ھے اور دنیا کے مختلف طریقوں کا اس عبادت میں حاضر ھونا ایک بہترین اور مناسب موقع ھے تاکہ الله کی دوسری عبادتوںکی طرح اس قابل ملاحظہ مجمع میں روح عبادت بہتر طور پر جلوہ گر ھو اور اس خاص عبادت  کا جوھر اپنی پوری آب وتاب کے ساتھ چمکے لہذا فرمان الٰھی کے مطابق پیغمبر اسلام(ص) نے اسلامی حکومت کے نمایندے حضرت علی (ع) کو مشرکوں سے بیزاری کے اعلان پر مامور فرمایا تاکہ توحید کی سرحد شرک و طاغوت کی سر حد سے مکمل اور قطعی طورپر جدا ھوجائے ، اور مسلمانوں کی صفیں کفار ومشرکین کی صفوں سے ممتاز اور علیحیدہ ھوجائیں اور اس طرح سے حج کاسیاسی اور عبادی چھرہ جلوہ گر ھو اور بیت الله کے زائر اسلامی حکومت کایہ منشور سن کر جو شرک سے نفرت او رمشرکوں کے سامنے تسلیم نہ ھونے پر مشتمل ھے اس پیام توحید کو اس طرح ( جیسا کہ مسلمان اپنی زندگی میںبہت سے کاموں میں کعبہ کی سمت متوجہ ھوئے ھیں ) ویسے ھی بیت اللہ کی برکت سے توحید کا پیغام بھی دنیا کے مختلف گوشوں میں پھیل جائے۔[3]

وَاَذَانُ مِنَ اللهِ وَ رَسُولِہِ اِلَی النَّاسِ یَومَ الحَجِّ الاَکبَرِ اِنَّ اللهَ بَريءٌ مِنَ المُشرِکِینَ وَ رَسُولُہُ فَاِن تُبتُم فَہُوَ خَیرٌ لَکُم وَ اِن تَوَلَّیتُم فَاعْلَمُوا اَنَّکُم غَیرُ مُعجِزِیِ الله[4] 

اور حج اکبر کے دن ( جس دن سب حاجی مکہ میں جمع ھوتے ھیں ) الله ورسول کی طرف سے یہ عام اعلان ھے کہ الله اور اسکا رسول(ص) دونوں مشرکوں سے بیزار ھیں ، لہذا اگرتم لوگ توبہ کروگے( اور اسلام لے آؤ گے ) تو تمھارے لئے دنیا اور آخرت دونوں میںبہتر ھوگا اور اگر انحراف کیا تو یاد رکھنا کہ تم خدا کی قدرت پر غالب نھیں آسکتے ( بلکہ خدا اور رسول(ص)  کی قدرت کے سامنے کمزور رھوگے)۔

قرآن کے اس حکم پر عمل کرتے ھوئے امام زمانہ(عج) کے نائب کبیر سید العلماء والعرفاء و سید الفقھاء حضرت امام خمینی (رہ) ( طاب ثراہ ) نے بپھرے ھوئے شیر کے مانند حج کے زمانہ  میں مشرکوں سے بیزار ی کی آواز بلند کی ، اور تمام حاجیوں کومشرکوں سے بیزاری کے لئے دعوت دی ، یھاں پر ھم تبر کاً امام زمانہ(عج) کے نائب کے جامع پیغام اور منشور مقدس کی چند سرخیاں پیش کرتے ھیں ۔

حاجیوں کے نام حضرت امام خمینی (رہ) کے پیغا م کا خلاصہ

مشرکوں سے بیزار ی کا وہ اعلان جو ار کان توحید میںسے ایک رکن اور حج کے سیاسی واجبات میں سے ایک فریضہ ھے ، ایام حج میں شجاعت او ر مردانگی کے ساتھ شاندار اور بہتر طریقہ سے مظاھروں کی شکل میں انجام دیناچاہئے ، ایرانی وغیر ایرانی حجاج کو چاہئے کہ حج کے ذمہ دار افراد اور ھمارے نمایندہ جناب حجةالسلام آقای کروبی سے مکمل ھماھنگی کے ساتھ تمام پروگراموں میں شرکت کریں اورمشرکوںسے بیزاری نیز سامراجی ملحدوں ، خصوصاً ظالم امریکا سے خانہ توحید میں برائت و بیزاری کی آواز بلند کریں اور الله اور اسکی مخلوق کے دشمنوں سے اظھار نفرت میں غفلت نہ برتیں ۔

کیا دینداری ،حق سے محبت او رباطل سے اظھار نفرت او رغم وغصہ کے سوا کچھ اور ھے ؟ یکتا پرستوں کو اسوقت تک ھرگز عشق حاصل نھیں ھو سکتا جب تک کہ وہ مشرک ومنافقوں سے مکمل نفرت کا اظھار نہ کریں او راس کے لئے خانہ کعبہ سے بہتر اور کون سی جگہ ھو سکتی ھے ، خانہ کعبہ ، خانہ امن اورطھارت ھے اور وھاں پر ظلم و تجاوز غلامی ونامردی جیسی قبیح صفات پائی جاتی ھیں اسکی نسبت سبھی لوگوں پر واجب ھے کہ اپنی گفتارا ور کردار سے اظھار نفرت کریں ، او ر( اَٴلَستُ بِرَبِّکُم ) کے میثاق کی تجدید کرتے ھوئے متفرق اسباب اور خدائی کے دعوے دار بتوں کو توڑدیں۔

پیغمبر اسلام (ص) کی سیاسی تحریک کے سب سے بڑے اور اھم ترین واقعہ (وَاَذَانُ مِنَ اللهِ وَ رَسُولِہِ اِلَی النَّاسِ یَومَ الحَجِّ الاَکبَرِ)کوزندہ کریں او رمکرر انجام دیںچونکہ یہ سنّت پیغمبر(ص) ھے ، اور اپنے مقدس دفاع اور مجاھدت کی صفوں کو مضبوط ومستحکم کریں ، اور شیطان کی پیروی کرنے والے مردہ دل او ربے خبر افراد کومسلمانوں کی صفوں میں گھس کر ان کے عقیدہ اور عزت پر حملہ کرنے کا اس سے زیادہ موقع نہ دیں ، اور ھر جگہ اورھر سرزمین سے خصوصاً کعبہ حق میں خدا کے لشکر سے مل جائیں ، زائرین اور حجاج عزیز ، عشق اور شعور اور جھاد کی مقدس اور بہترین سرزمین سے ایک بلند اور بالا کعبہ کی طرف سفر کریں او رجیسا کہ شھیدوں کے سید وسالار حضرت ابیٰ عبدالله الحسین (ع) نے احرام حج سے احرام حرب و جنگ او رکعبہ و حرم کے طواف سے مالک کعبہ کے طواف اور زمزم سے وضوء کے بجائے خون شھادت سے وضوء فرمایا ویسے ھی ان کی سیرت پر چلتے ھوئے ایک شکست ناپذیر امت اور سیساپلائی ھوئی دیوار میں تبدیل ھوجائیں تاکہ پھر نہ مشرق کی سوپر پاور اسکے مقابلہ میںٹھھر سکیں اور نہ مغرب کی طاقت اسکی تاب لاسکے ۔

یقیناً حج کا پیغام او رحج کی روح اسکے علاوہ اور کچھ نھیں ھوسکتی کہ تمام مسلمان جھاد بالنفس کے دستورالعمل کو بھی سیکھیں نیز کفر وشرک کے خلاف بر سرپیکار ھونے کے طو روطریقہ کوبھی ۔

بھر حال ایام حج میں بیزاری کا اعلان ،عھد مبارزہ کی تجدید اور گرو ہ مجاھدین کی کفر وشرک اور بت پرستی کے خلاف نبرد کے جاری رکھنے کی مشق ھے اوریہ نعروں ھی میں منحصر نھیں بلکہ یہ منشور جھاد کے آشکار اعلان کی ابتدا ھے نیز ابلیس و شیطان صفتوں کے لشکر کے مقابلہ میںخدا کے لشکر کی سازماندھی او رتیاری ھے اس کا شمار توحید کے بنیاد ی اصولوں میں ھوتا ھے، اگر مسلمان الله کے گھر میں برائت کا اظھار نہ کریں تو پھرکھاںپر اظھار کرسکتے ھیں ، او راگر حرم وکعبہ و مسجد اور محراب ،خدائی فوج اور مدافعین حرم اور برائت کے مورچہ اور ان کے لئے پشت پناہ نہ ھوں تو اس سے بہتر اورکیاپناہ گاہ ھوسکتی ھے۔

یہ بات فرسودہ اور پرانی ھونے والی نھیں کہ اعلان برائت فقط ایام حج میںمنحصر نھیں ھو سکتا بلکہ مسلمانوں کو چاہئےے کہ پورے عالم کو ذات حق کے لئے عشق و محبت سے اور خدا کے دشمنوں کے لئے بغض و نفرت سے لبریز کردیں ،خنّاس اور منحرف افراد کے وسوسوں شبھات اور تردید پر کان نہ دھریں ،پورے جھان کو اسلام میں شامل کرنے نیز توحید کے مقدس ساز آھنگ سے ایک لمحہ بھی غفلت نہ برتیں چونکہ یہ بات مسلّم ھے کہ دنیا کے ظالم ، جابر ،خونخوار اور ملتوں کے دشمن اب چین و سکون سے نہ بیٹھیں گے طرح طرح کے حیلوں اور بھانوں سے مختلف شکلوں اور لباسوں میں طرح طرح کے حربے استعمال کریں گے اور بظاھر مقدس نظر آنے والے اور حکومتوں کی روٹیوں پر پلنے والے درباری ملاّ قوم پرست افراد اور منافقین غلط اور منحرف فھم و تفسیر اور فلسفہ استعمال کریں گے مسلمانوں کو غیر مسلم کھنے ، ان کی شجاعت اور ھیبت پر ضرب لگانے اور امّت محمدیہ کا اقتدار ختم کرنے کے لئے ھر ممکن کوشش کریں گے ۔

عجب نھیں کچھ جاھل اور سادہ لوح افراد یہ کھیں کہ خانہ حق کعبہ کی عظمت کو نعروں ، مظاھروں اور اعلا ن برائت سے پامال نھیں کرنا چاہئے اور شاید یہ بھی کھیں کہ حج تو عبادت و ذکر کی جگہ ھے نہ کہ صف آرائی و رزم گاہ ،اور عجب نھیں کچھ ضمیر فروش علماء بھی یہ بات ذھن نشین کرانے کی کو شش کریں کہ مبارزہ ،برائت اور جنگ و غیرہ ھمیشہ دنیا داروں کا کام رھاھے یایہ کھیں کہ ایام حج میں سیاسی مسائل کا چھیڑنا روحانیت اور علماء کی شان کے خلاف ھے یہ اور اس طرح کی دوسری باتیں ظالم دشمن کی تحریک اورمخفیانہ سیاست کا حصہ ھے ، لہذا مسلمانوں کو اپنے تمام امکانات اور لازمی وسائل کے ساتھ مسلمانوں کے مفاد اور الٰھی ارزشوںسے دفاع کے لئے میدان عمل میں آجانا چاہئے اور جب انبیاء کا احترام باقی نہ رھا تو پھر کسی کے لئے بھی کوئی پناہ گاہ نھیں ھوسکتی ۔

خلاصہٴ مطلب یہ ھے کہ مبارزہ اور قیام کا پھلا مرحلہ بیزاری کا اعلان ھے ،اور اسکے دوسرے مرحلوں کا جاری رکھنا ھمارا فریضہ ھے اور یہ کام ھر زمانے کے مطابق مناسب طور طریقوں اور شان و شوکت کے ساتھ ھونا چاہئےے ،ھمیں یہ دیکھنا چاہیئے کہ دور حاضر میں کفر و شرک کے علمبرداروں نے توحید کے وجود اور وحدانیت کے تصورکو خطرہ میں ڈال رکھا ھے ، اور ھر قوم اور ملّت کے دینی ، سیاسی ، اور تمدنی ،مظاھروں کو ھوس پرستی اور شھوت نفسانی کا کھلونا بنا رکھا ھے ، ایسے حالات میں کیا کرنا چاہئےے ؟۔

کیا گھر میں بیٹھ جانا چاہئے اور انسان و انسانیت کی منزلت کی توھین اور اسکے بارے میں غلط تحلیل، شیطان اور اسکی ناجائز اولاد کی طرف سے مسلمانوں میں عجز وکمزوری کی تبلیغ و ترویج کو برداشت کر لینا چاہئےے اور معاشرے کو کمال حقیقی اورخلوص آرزو کی انتھا تک پھونچنے سے روک دینا چاہتے ھیں ؟ اور فقط تصور کر لینا چاہتے ھیں کہ انبیاء اکرام (ع) کا قیام فقط لکڑی اور پتھر کے بے جان بتوں کو توڑنے ھی میں منحصر تھا ،( نعوذ بالله)

حضرت ابراھیم (ع) جیسے اولوالعزم پیغمبر بت شکنی میں پیش قدم اور ظالموں کے خلاف جھاد کے میدان کو تر ک کردیں؟ حالانکہ حضرت ابراھیم (ع) نمرودیوں نیز چاند ، سورج اور ستاروں کی پوجا کرنے والوں کے خلاف ، بت شکنی جنگ اور تمام مجاھدت جو ایک عظیم ہجرت کا مقدمہ ھے اور وہ تمام ہجرتیں ، سفرکی صعوبتیں نیز دوسرے مسائل و آلام کا برداشت کرنا بے آ ب و گیاہ وادی میں سکونت ، خانہ کعبہ کی تعمیر حضرت اسماعیل (ع) کا فدیہ سب اسی رسالت و بعثت کا مقدمہ ھے جس میں خاتم النبیین ، معمار کعبہ کے حرف بحرف پیغام کا اعادہ کرتے ھےں اور اپنی ابدی رسالت کو ابدی کلام:

 اِنَّنِی بَرِیٴٌ مِمَّا تُشرِکُونَ کے ذریعہ ابلاغ کرتے ھےں ،  لہٰذاھم اگر بت پرستی وغیرہ کی اسکے علاوہ تفسیر وشرح اور بررسی کرےںتوگویا ایسا ھے جیسا کہ دور حاضرمیں بت اور بت پرستی کا وجود ھی باقی نھیں کیا کوئی عاقل انسان ایسا ھے جو اس نئی اورماڈرن بت پرستی کو اسکی مخصوص مشکلوں اور حیلہ اور بھانوں کے ساتھ نہ پہچانتا ھو ؟ اور اسلامی ممالک اور مسلمانوںکی جان ومال و عزت و آبرو اور تیسری دنیا پر وائٹ ھاوس جیسے بت خانہ کے تسلط کی خبر نہ رکھتا ھو ،؟!

آج کافر اور مشرکوں سے ھماری بیزاری کی آواز، ظالم کے ظلم کے خلاف ھے اور یہ اس امّت کی فریاد ھے ،جس کی جانیں مشرق و مغرب کی طاقتوں خصوصاً امریکا اور اسکے ھمنواؤں کے تجاوز اور ظلم و تشدّدسے لبوں تک آچکی ھیں ، یہ اس غمزدہ امّت کی فریادھے جسکا گھر ،وطن، عزت ،  آبرو اور مال و متاع تباہ و برباد کر دیا گیا۔

ھمارا یہ بیزاری کا اعلان افغانستان کی رنجیدہ اور مظلوم ملّت کی فریادھے،اور مجھے افسوس ھے کہ روس کی حکومت نے میری یاد دھانی اور افغانستان کے بارے میں دی گئی دھمکیوں پر عمل نہ کیا، اور اس اسلامی ملک پر حملہ کردیا ، میں نے متعدد بار کھاھے اور اب بھی یاد دھانی کرارھا ھوں کہ کم از کم افغانستان کی ملّت کو اسکے حال پرچھوڑ دو ،افغانستان کے لو گ خوداپنی تقدیر کا فیصلہ کرلیں گے اور حقیقی آزادی حاصل کرلیں گے ، ان کو کرملن کی سرنوشت او رامریکہ کی رھبری کی ضرورت نھیں، یہ بات مسلم ھے کہ افغانی مجاھد غیر ملکی فوج کو افغانستان کی سر حد سے نکالنے کے بعد کسی دوسری حکومت کے سامنے سر نھیں جھکائیں گے اور اگر امریکا نے سرزمین افغانستان پرقدم رکھنے کا ارادہ بھی کیا تو اسکو کچل کر رکھ دیں گے ۔

ھمارا اعلان بیزاری افریقہ کے مسلمانوں کی فریاد بھی ھے انکی فریاد جو ھمارے دینی بھن بھائیوںکی فریادھے ، جن کو سیاہ ھونے کے جرم میں بے دین، قوم پرست اور روسیاہ ظالموں کے تازیانے کھانے پڑرھے ھیں ۔

ھماری یہ برائت کی آوازلبنان اور فلسطین کے مظلوم لوگوں کی فریادھے اور ان تمام ممالک اور قوموں کی فریاد ھے جن پر مشرق ومغرب کی طاقتیں اپنی حریصانہ نظریں جمائے ھوئے ھیں اور ان کی مال ودولت کو غارت کررھے ھیں، اور اپنے نوکروں کو ان پر مسلط کررکھا ھے اور ہزاروں کیلومیٹر دور رہتے ھوئے بھی ان کی سر زمین پراپنے منحوس پنجے گاڑ رکھے ھیں اور ان کی زمینی اور دریائی سرحدوں پر قبضہ کر رکھا ھے ۔

ھماری یہ آواز ان سب لوگوں کے دل کی آواز ھے جو امریکہ کی فرعونیت، ظلم وبربریت اور تسلط سے تھک چکے ھیں اور برداشت کی حدوں سے گذرچکے ھیں او راب نھیں چاہتے کہ ان کے غم وغصہ او رنفرت وغضب کی آواز ان کے سینوں میں ھی گھٹ کر ھمیشہ کے لئے دم توڑدے ، اور جنھوں نے آزاد زندگی گذارنے اور آزادی سے مرنے کا ارادہ کرلیا ھے او رپوری نسل کے فریادرس اور امین ھیں ۔

ھمارا یہ اعلان بیزاری اپنے مکتب حیثیت او راپنی ناموس کے دفاع کی فریاد ھے ، اپنے مال ودولت او رمنابع وذخائر کے دفاع کی فریاد ھے یہ اس مجبور مظلوم اور درد مند قوم کی فریاد ھے ،جس  کے دلوں کو کفر ونفاق کے خنجروں نے چیر ڈالا ھے۔

ھماری یہ فریاد ان بھوکے پیاسے، ننگے او رپابرھنہ لوگوںکی غربت او رافلاس کی فریاد ھے کہ جن کے رات دن خون پسینہ کی کمائی کو دنیا کے لیٹروں اور بین الاقوامی ڈاکؤں نے چھین کراپنے خزانہ بھر لئے ھیں، سرمایہ داری، سوسیالیزم اور کمیونیزم کے نام پر زحمت کش افراد مزدور کسان اور غریب لوگوں کے جگر کا خون نچوڑ رھے ھیں اور پوری دینا کے اقتصاد کی رگ ِحیات کو اپنی مٹھّی میں لے رکھاھے اور دنیا کے بے بس افراد کو ان کے چھوٹے چھوٹے حقوق سے بھی محروم کررکھا ھے ۔

ھماری یہ برائت کی فریاد ، اس امّت کااظھار بیزاری ھے جسکو نیست ونابود کرنے کے لئے پور ا کفر و استکبار گھات میں بیٹھا ھے ، اور کفر نے اپنے تمام تیرکمان اور نیزوں کا رخ قرآن واھل بیت (ع) کی طرف کررکھا ھے، ایساکبھی نھیں ھوسکتا کہ :

امّت محمد(ص) اور کوثر اور چشمہ عاشورا سے سیراب ھونے والے اورصالحین کی وراثت کی منتظر قوم ،ذلّت کی موت یاغرب و شرق کی غلامی پر راضی ھوجائے او ریہ بھی ممکن نھیں کہ دیو صفت مشرک و کافر ،قرآن اوراھل بیت رسول(ص)، امت محمد(ص) اور حضرت ابراھیم (ع) کی پیروی کرنے دالوں پر ظلم وتجاوز اور بربریت کا کھیل کھیلتے رھیں اور خمینی خاموش او رآرام سے بیٹھ کر مسلمانوں کی ذلّت اور حقارت کا تماشہ دیکھتا رھے ۔

میں نے اپنے خون او راس ناقابل جان کو مسلمانوں سے دفاع کے اھم فریضہ کو ادا کرنے کے لئے آمادہ کر لیاھے اور شھادت کی عظیم کا میابی کے انتظار میں ھوں ،تمام دشمن طاقتیں (سوپر پاورس) اور ان کے زر خریدغلام یہ یاد رکھیں کہ اگر خمینی(رہ)  تنھا بھی رہ جائے تو بھی اپنی اس راہ یعنی کفر و شرک و ظلم اور بت پرستی کے ساتھ جنگ کو جاری رکھے گا اور اس راہ سے ایک لمحہ کے لئے بھی غافل نھیں رھے گا اور خداوند رحمن کی مدد سے اسلامی دنیا کے تمام رضا کاروں کے ساتھ اور ڈکٹیٹروں کے غضب میں گرفتار ان تمام پا برھنہ غربت زدہ اور مظلوم افراد کے ساتھ مل کردنیا کے تمام ظالم و جبّار جوبار بار ظلم و تشدّد کا کھیل ، کھیل رھے ھیں اور ان کے نو کروں پر آرام کی نیندیں حرام کردوں گا۔[5]

یزید (اوربنی امیہ ) کے جانشینوں کی نا خلف اولاد

 کے ھاتھوں حاجیوں کا قتل عام

مورخہ۶ذی الحجہ  ۴۰۷اھ جمعہ کے دن غروب کے وقت جب ایرانی مسلمان حاجی مکہ مکرمہ میں توحیدی نعرے لگاکر مشرکین سے بیزاری کا اظھار کررھے تھے ، سعودی عرب خونخوار اور وحشیوں کے ھاتھوں خاک و خون میں غلطاں کردے گئے ، پھلے سے سوچا سمجھا اور مسلح حملہ مظاھر ہ کرنے والے جلوس پر اس حالت میں کیاگیا کہ انقلاب اسلامی ایران عراق کی ایران پر تحمیلی جنگ کے دوران زخمی شدہ افراد جو اپنے دفاع پر قادرنہ تھے اور فرار بھی نھیں کرسکتے تھے ، مظاھرہ کر نے والے جلوس میں سب سے آگے تھے یہ حملہ اسقدر بزدلانہ اور وحشیانہ تھا کہ وہ عورتیں کہ جو شھیدوں کی مائیں بھنیں او ربیویاں تھیں اور ابھی اپنے عزیز او رجوان شھیدوں کے غموں کو نہ بھولنے پائی تھیں ان پر بھی رحم نہ کیاگیا اور بموں کے دھماکوں سے ان جگر سوختہ اورغمزدہ عورتوں کے دلوں پر غم کا پھاڑگرا دیا گیا ، سعودی حکومت کے خونخوار اور وحشی کتوں نے زھریلی گیس اوربموں کے دھماکوں کے ذریعہ جو داغ لگایاوہ ناقابل فراموش ھے ۔

سعودی حکومت کے اس وحشیانہ اور انسانیت سوز حملہ میں جو یقیناً پھلے سے سوچا سمجھا تھا ایرانی اور غیر ایرانی کئی سو حاجی شھید ھوئے اور کافی تعداد میں زخمی ھوگئے ، حجاج بن یوسف ، یزید اور معاویہ کے جانشینوں کے ناخلف اولاد کی درندگی اس قدر بڑھ چکی تھی کہ زخمیوں کی مدد کرنے سے ریڈکراس کے افراد کو بھی روکا گیا اورزخمیوں سے ملاقات کرنے کو بھی منع کیاگیا ۔

زخمیوں کے گھروالوں اور عزیزوں کو بھی ان کے دیدار کی اجازت نہ دی گئی ،یہ ظلم وبربریت کاکھیل اس جگہ اوراس مقام پر کھیلا گیا جو خدا کی طرف سے خانہ امن قرار دیا گیا ھے ، مَن دَخَلَہُ کَانَ آمِناً اوروہ شھر جھاں پر حیوانات اور پرندوں تک کا شکار منع ھے مکھی ، مچھر اورگھاس پودوں تک کو نقصان پھونچا ناجائز نھیں، کئی سو مظلوم اور بے دفاع انسانوں کا قتل عام کیا اور بے دریغ ان کا خون بھاد یا گیا، اور اسی پر اکتفانہ کیا بلکہ اس قبیح فعل پر ایک دوسرے کو ٹیلیفون وغیرہ پر مبارک بادیں پیش کی گئیں !

سعودی حکومت نے درندگی اور بربریت میں یزید او رشمر کو بھی پیچھے چھوڑدیا ، اور سعود ی حکومت کے چھرے پرایسا دھبہ پڑگیاجو رھبر انقلاب کے بقول کوثر وزمزم کے پانی سے بھی صاف نھیں ھوسکتا۔

کیا کوئی بتاسکتا ھے کہ اس پر امن مظاھرہ کرنے والے حاجیوں کا جرم کیا تھا اور کیوں پولیس نے انھیں زھریلی گیس اور بموں کا نشانہ بنایا ۔

کیا خادم الحرمین کا ایمان ، انسانیت اور بھادری اسی میں ھے کہ اپنے سکھائے ھوئے کتّوں کو کچھ عورتوں اور زخمی افراد پر چھوڑ دیں تا کہ وہ ان بے بس افراد کوبھوکے بھیڑئے کی طرح چیرپھاڑ دیں ،خانہ کعبہ اورحرمین شریفین کے واقعی خادموں کاکیا خوب احترام کیا اپنے شُرطوںاور بے دین پولیس سے خانہ خدا کے زائروں اور میھمانوں کی مھمان نوازی کی اورحرم امن الٰھی میں بھی مارپیٹ قتل و غارت گری اورقید وبند سے بھی دریغ نھیں کیا ، ضعیف ، کمزور  او رزخمیوں پربھی رحم نہ کیا۔

حج ھر طرف سے منھ موڑکر فقط اللهکی طرف متوجہ ھوجانے کانام ھی نھیں بلکہ حج ایک ایسی عبادت ھے جسمیں سیاست کی بھی آمیزش ھے مخلوق خدا میں رھنا ان سے محبّت کرنا اور ھم آواز ھونا اور تمام مسلمانوں کے ساتھ مل کر قدم اٹھا نابھی حج ھے ، حج نماز شب کی طرح فقط ایک انفرادی عبادت نھیں ،بلکہ یہ ایک اجتماعی عبادت ھے ۔

قرآن مجیدکے فرمان کے مطابق لوگوں کے لئے حج کے بہت سے فائدے ھیں ، ان میں سے ایک فائدہ منافقوں اور خیانت کار افراد کو رسوا کرنا ھے نیزمسلمانوں کی رھبری کا جھوٹا دعوی ٰکرنے والوں کا راز فاش کرنابھی ھے،خادم الحرمین اور ملک کے لباس میں اسلامی سرزمین کو غاصب کے چھرے سے نقاب اٹھانا بھی ھے ، کعبہ مسلمانوں کی زندگی کی استقامت کا سبب ھے ، جَعَلَ للهُ الکَعبَةَ قِیَاماً لِلنَّاسِ قرآن مجید کے حکم کے مطابق حج ،کافر ، مشرک ، ملحداور منافقوں سے برائت اور بیزاری کے اظھار کا بہترین موقع ھے ، ایرانی اور انقلابی شیعہ مسلمان یہ کوشش کرتے ھیں کہ وھی حج بجا لائیں جو قرآنی اور محمدی حج ھے۔ گر چہ محمد بن عبد الوھاب اور وھابیوں کے زر خرید قلمکار آل سعود اور سعودی جلّاد اس حج کو کوئی حیثیت نہ دیں اور حج کانام نہ دیں ، وھابیوں کا کھنا ھے کہ شیعوں کا حج ھمارے حج جیسا نھیں[6]

 اور وہ صحیح بھی کہتے ھیں کیوں کہ شیعوں کا حج جوش و خروش اور ولولہ کا حج ھے نہ کہ خاموش حج، سعودی حکومت کی اپنے اس بڑے جرم کو جس نے اسے پورے عالم اسلام میں رسوا کرکے اس کے چھرے سے نقاب کھینچ لی ھے ، چھپانے کی بے ھودہ کوشش کی ھے، جتنا چاھیں چھپائیں اور جس قدر چاھیں بھانہ بازی کریں لیکن اس جرم سے ان کا کثیف اورخبیث سلسلہ در ھم و برھم ھو کررھے گا۔(انشاء اللہ)

اور خدائے قھار جو ربّ البیت اور منتقم حقیقی ھے خانہ کعبہ اور حرمین شریفین کی بے حرمتی کا بدلہ امر یکہ کے زرخرید غلاموں سے لے کر رھے گامَکَرُو ا وَ مَکَرَاللهُ وَ اللهُخَیرُ المَاکِرِینَ [7]

او ریھودیوں نے(عیسیٰ (ع) سے) مکاری کی او رخدا نے اس کی دفیعہ کی تدبیر کی او رخدا سب سے بہتر تدبیر کرنے والا ھے

سرزمین ایران سے خورشیدانقلاب اسلامی کا طلوع ھونا اور پھر اسکی درخشان اور قابل ملاحظہ کا میابیوں نے دنیا کے ظالم ،ستمگر اور سامراجی نوکروں کے دلوں میں رعب ،وحشت اور دبدبہ ڈا ل دیاھے اور سعودی مزدور خیانت کار اور ملحدوں کو اسطرح وحشت زدہ اور حراساں کردیا ھے کہ کبھی وہ قتل و غارت گر ی کے ذریعہ اس آواز کو روکنے کی کوشش کرتے ھیں اور کبھی درباری ملّاوٴں کو جمع کرکے حج کی غلط تفسیر کرتے ھیں اور حج کو فقط ایک غیر سیاسی شکل میں پیش کرتے ھیں،اور کبھی سیم وزر، درھم و دینار کے لالچی قلمکاروں کوشیعیت اور ایران کے اسلامی انقلاب کی ردّ میں کتابیں لکھنے پر آمادہ کرتے ھیں اور کبھی مجبور ھوکر اپنے خونخوار حکام کے اشاروںپر اور شاہ اور اس کے ھم پیالہ اورھم مشربوں کی تشویق پر درندہ صفت پولیس اور وحشی کتّوں کے ذریعہ بیت الله کے زائروں کے درپے ھو جاتے ھیں ان کا قتل عام اور ان کا خون بھاتے ھیں۔

لیکن ھمیں کیاڈر کہ اپنے اس جان کا ناقابل ھدیہ محبوب حقیقی کی بارگاہ میں پیش کریں ، اوراصل معبود سے ھمکنار ھوں ، ھماری قوم نے آزادی کی قیمت چکانے کے لئے اپنے آپ کو پھلے سے آمادہ کر رکھا ھے، اور نہ صرف یہ کہ شھادت سے نھیں گھبراتے ،بلکہ قرآن اوراسلام کے مقدس مقاصد کو پائے تکمیل تک پھونچا نے کے لئے شھادت سے ھم آغوش ھونے کےلئے بے قرار ھیں۔

اس سال ایران کے مسلمان اور انقلابی حاجیوں نے نئے انداز کا احرام زیب تن کیا اور خانہ کعبہ سے صاحب کعبہ کی طرف پرواز کیا   

           کعبہ یک سنگ سیاھی است کہ رہ گم نشود

           حاج     احرام   دگربند  و  بیین   یار  کجا    است

  بھول نہ جانا اوربھٹک نہ جانا کہ خانہ کعبہ فقط ایک راستہ ھے معبود حقیقی تک پھونچنے کے  لئے ، لہذا اسکے لئے ایک دوسرے احرام کی ضرورت ھے تا کہ مالک کعبہ کے وصال سے ھمکنار ھوسکیں

یہ الله وحدہ لاشریک کے دل سوختہ عاشق اور وادی فنا کے ہجر کے درد سے آشنا محبوب،جنھوں نے جماران کے شیر سے سیرو سلوک ، عرفان او رعشق کا درس لیا ھے اپنے پیرو مرشد خمینی عظیم کی طرح موت کو وحشت زدہ کردیا ھے شھادت کے لمحہ کو عید اور وصال کا دن اور دینداری کا وہ لمحہ سمجھتے ھیں کہ جب فراق و ہجر کی کلفتیں دم توڑ دیتی ھیں وہ اس دنیائے فانی سے چلے جاتے ھیں ،  تا کہ اپنے معشوق کی شمع وصال کے اردگرد پروانہ کا کام انجام دیں اور اپنی جان کے ناقابل ھدیہ کو اللہ تعالیٰ پر نچھاور کریں ، وہ بخوبی جانتے تھے کہ وصال کی قیمت ادا کررھے ھیں۔

            قدم براہ طلب چون نھی زجان بگریز

             کہ  شرط  راہ   بو جان   من   سبکباری !

جب کسی طلب کی راہ میں قدم رکھو تو جان دینے سے گریز نہ کرو چونکہ اس راہ کی شرط یہ ھے کہ انسان ھلکا پھلکا رھے

خوش نصیب ھیں وہ لوگ جو قربان گاہ عشق اور میعاد گاہ معشوق میں ان سعودی بے رحم جلّادوں کے ھاتھوں جو کعبہ وصال کی راہ میں مکاری سے گھات لگائے ھوئے بیٹھے تھے ، خاک و خون میں غلطاں ھوکر اس ظلمت کدے اورجھان فانی سے گذرکر خدا ئے متعال کے جوار رحمت میں آرام فرما رھے ھیں اور ابدی سعادت کی عظیم کامیابی اور کامرانی پر فائز ھوچکے ھیں خداوند عالم اور انبیاء اور اولیاء حق کی ابدی لعنت اور نفرین ھوجرم پیشہ سعودی وھابی جلاد پر جو کعبہ او رحرم الٰھی کے غاصب ھیں ۔

اختتام کلام اور  دعا

خدایا! تجھ کو تیرے اولیاء کے نور قلب،صالحین کے پاک نفوس، سیدالشھداء کے طاھر و مطھر خون کا واسطہ یہ ایام محرم جو حضرت سید الشھداء کی شھادت سے منسوب ھے ، تجھ کو تیری غیرت کا واسطہ اور تجھکو تیری عزّت و جلال کی قسم ان مظلوم شھیدوں کے بھائے گئے خون ناحق کا انتقام اس حکومت اور آل سعود بدنھاد خاندان سے طلب کر اور ان کو اپنے قھرو خشم اور غضب کی آتش کا مزہ چکھا اور اس خبیث نسل کو صفحہ ھستی سے نیست و نابودفرما، (الہٰی آمین)

خدایا تیری بارگاہ میں درخواست ھے کہ ھمارے عزیز اور عظیم رھبر کو اپنی پناہ میں رکھ اور ان کی خواھش میں ( جو تیری خواھش اور تیرے دین کے لئے ضروری ھے ) کامیابی اور کامرانی عطا فرما اور ھمیں ان کی واقعی اور حقیقی اطاعت کی توفیق اور لیاقت عطا فرما اور ھمار ے مخلص فوجیوں اور لشکر کو میدان جنگ میں مکمل کامیابی سے ھمکنار کر اور شھداء کے محترم اھل خانہ کو صبر جمیل اور اجر جزیل عنایت فرما اور ھم کو اپنی یادسے ایک لمحہ بھی غافل نہ رکھ اور ھمیں ایک لمحہ بھی اپنے سے جدا نہ کر،(آمین یا ربّ العلمین)

رَبَّنَا وَ تَقَبَّل مِنَّا اِنَّکَ اَنتَ السَّمِیعُ العَلِیم

والحمد لله ربّ العالمین

اقل العباد

ڈاکٹرھمایوں ھمتی

 

 


[1] تفسیر نمونہ جلد نمبر ا۴ ص ۷۷ا۔

[2] و سائل شیعہ ج ۹ ص ۴۴۵)

[3] اس حصہ کی تحریر میں نے استاد بزرگوار حضرت علامہ آیت الله شیخ عبد الله جوادی آملی مدظلہ کے مقالے بنام نظام حج در اسلام سے استفادہ کیا ھے جو کتاب بنام مجموعہ مقالات حج وزارت ارشاد اسلامی ، میں چھپ چکا ھے ۔

[4] سورہ توبہ آیت ۳ ۔

[5] فریاد برائت : حجاج بیت الله الحرام کے نام امام خمینی (رہ) کا پیغام مرداد ۳۶۶ا ش مطبع وزارت فرھنگ و ارشاد اسلامی ۔۔

 [6] اس نکتہ کہ یادآوری ضروری ھے کہ یہ جو کھا جاتا ھے کہ شیعوں کا حج ، ھم مسلمانوں کے حج جیسا نھیں ھے اس بات کو ابراھیم سلیمان جھمان نامی وھابی نے اپنے ایک مقالہ میں لکھا ھے جس کا نام مقالہ ای در ردّ شیعہ ھے ،اور ھم نے اس کتاب حاضر کے ص ۱۵۵ / پر اسکا  خلاصہ کر کے ترجمہ پیش کیا ھے اورقائین کی مزید اطلاع کے پیش نظر اس مغرض اور رافض کی عین عبارت آپ کے لئے نقل کرتے  ھیں وہ ھرجگہ شیعوں کو مسلمانوں کے مقابلہ میں لاکر کھڑا کرتا ھے البتہ مسلمانوں سے اسکی مراد خود وہّابی حضرات ھیں نہ اھل سنّت چونکہ وہ لوگ سنیوں کو بھی پیغمبر اسلام(ص) کی قبر مبارک کی زیارت اور بعض دوسرے مسائل میں عقیدت سے کام لینے کومحکوم کرتے ھیں اور مشرک ، کافر اور بدعت گذار کہتے ھیں ،تو تنھا شیعہ ھی نھیں کہ وھابیوںکے مغرضانہ حملات کا نشانہ ھوں بلکہ اپنےکوموحد کھنے والے سنّی حضرات محکومیت اور تکفیر میں بھی پیش قدم نظرآتے ھیں اور وھابی فرقہ کے مؤسس کی کتابیں بنام توحید یا کشف الشبھات میں یہ سب باتیں نقل ھوئی ھیں چنانچہ یہ وھابی مؤلف شیعوں کے بارے میں اس طرح رقم طراز ھے :

  زد علی ذلک ان اذانھم یختلف عن آذاننا و صلاتھم  تختلف عن صلاتنا ووضوء ھم یختلف  عن وضوء نا و صیامھم تختلف عن صیامنا وحجّھم یختلف عن حجّنا

یعنی شیعوں کی اذان ھم مسلمانوںکی اذان سے فرق کرتی ھے اور اسی طرح ان کی نماز ، وضو، روزہ اورحج بھی ھم مسلمانوں سے مختلف ھے ۔

ھماری مذکورہ گفتگو اسطرح کے وھابیوں کے ان جھوٹ ، تھمتوں کا جواب ھے ورنہ کون نھیں جانتا کہ انقلاب اسلامی ایران کے سارے شیعہ وسنی حجّاج سب ایک ساتھ مشرکین سے براٴت کے اظھار جیسے پروگرام میں شریک ھوتے ھیں اور سبھی مل کر خدا ، اسلام اور قرآن کے دشمنوںکے خلاف آواز بلند کرتے ھیں ، ھماری اس پوری کتاب میں صرف وھی وہّابی حضرات مخاطب ھیں جو اپنے کو اھل توحید سمجھتے ھیں ، اور بقیہ مسلمانوں حتی برادران اھل سنّت پر کفروشرک اور بدعت کی تھمت لگاتے ھیں ، اور ھمارے اس دعوے کا بہترین ثبوت ، متعھد علماء اھل سنّت کی وہ کتابیں ھیں جو وھابیوں کے خرافات کی ردّ میں لکھی گئی ھیں ۔

خداوند کریم! ساری دنیا میں مسلمانوں کے درمیان روز افزون الفت اور محبت قائم کر اوران کے دلوں کو ایک دوسرے سے نزدیکتر کرے ، اور ان کے دلوں میں دشمنان ِاسلام کے خلاف ھمیشہ کے لئے بغض اور نفرت کو باقی رکھ۔(آمین ثم آمین)

 وضاحت کے ساتھ تحریر ھے کہ وھابی مؤلف کے مذکورہ بالا مطالب کو بحوث مع السلفیة واھل السنّة مئولفہ جناب مھدی حسینی روحانی سے ترجمہ کرکے نقل کیا ھے، قارئین کرام کتاب ہذا کی طرف رجوع فرمائیں ۔

[7] سورہ آل عمران آیت ۵۴۔

 

 

index